پاکستان کی سپریم کورٹ مجھے نہیں بلاسکتی، وزیراعظم آزاد کشمیر

پاکستان کی سپریم کورٹ مجھے نہیں بلاسکتی، وزیراعظم آزاد کشمیر
پاکستان کی سپریم کورٹ مجھے نہیں بلاسکتی، وزیراعظم آزاد کشمیر

روزنامہ پاکستان کی اینڈرائیڈ موبائل ایپ ڈاؤن لوڈ کرنے کے لیے یہاں کلک کریں۔

مظفر آباد (آن لائن) وزیراعظم آزاد کشمیر راجہ فاروق حیدر خان نے کہا ہے کہ پاکستان کی سپریم کورٹ مجھے نہیں بلاسکتی۔ اس لئے کہ میں ان کے دائرہ اختیار میں نہیں ہوں۔ ان خیالات کا اظہار انہوں نے غازی ملت سردار محمد ابراہیم خان کی برسی کی تقریب سے خطاب کرتے ہوئے کیا۔

انہوں نے کہا کہ سیاسی اور معاشی طور پر مستحکم پاکستان کشمیریوں کی ضرورت ہے، پرویز مشرف نے اپنے دور میں کشمیر کا مقدمہ خربا کرکے نقصان پہنچایا کشمیر پر آج بھی بات چیت ہوگی۔ آنے والی حکومت سے مطالبہ کرتے ہیں کہ گھبرانے کی ضرورت نہیںہے۔ متحرک خارجہ پالیسی کی ضرورت ہے، اقوام متحدہ کی سلامتی کونسل میں کشمیر کا مسئلہ اٹھانے کی ضرورت ہے، ڈکٹیٹر شپ سے بدترین جمہوریت بہتر ہے، آزاد کشمیر کی حکومت شہداءکی وارث حکومت ہے۔ میرا مالک میرا اللہ ہے وہ میرے ساتھ ہے مجھے کوئی نہیں ہٹاسکتا۔ آزاد کشمیر میں آئین و قانون کے تحت نظام چلائیں گے ورنہ میری زبان بہت لمبی ہے یہ چل گئی تو پھر کسی کا کچھ نہیں چھوڑوں گا۔

آزاد کشمیر حکومت کا کردار مسئلہ کشمیر کے حوالے سے متعین کیا جائے، ہمیں میاں نواز شریف کی صحت کے بارے میں تشویش ہے۔ انہوں نے کہا میں چیف جسٹس پاکستان کے دائرہ اختیار میں نہیں آتا جو فرشتے یہاں بیٹھے ہیں جنہوں نے رپورٹ پنڈی بھیجنی ہے وہ میری ہر بات لکھیں، پاکستان میں الیکشن ہوگیا ہے، اب زرداری صاحب اور ان کی بہن کو نوٹس بھیجا گیا ہے۔ یہ تخریب کاری بند کی جائے۔

انہوں نے چیئرمین نیب سے کہا کہ پاکستان کے ساتھ بہت کھلواڑ ہوگیا ہے اس ملک کو چلنے دیں ، گلگت بلتستان میں بھاشا نہیں دیا مر ڈیم ہے۔ کیا پندرہ سو ارب روپے کا ڈیم چندے سے بن سکتاہے۔ یہ کیا مذاق ہے۔ پاکستان اور چین کے معاہدے کی شق پانچ پڑھ لیں ان کو کسی نے نہیں کہا یہ اٹھ کر ڈیزائن بنانے لگ گئے۔

مزید : علاقائی /آزاد کشمیر /مظفرآباد