روس میں جنسی تشددپر3 سگی بیٹیوں نے ملکر چاقوؤں کے وار سے باپ کو قتل کرڈالا

روس میں جنسی تشددپر3 سگی بیٹیوں نے ملکر چاقوؤں کے وار سے باپ کو قتل کرڈالا
روس میں جنسی تشددپر3 سگی بیٹیوں نے ملکر چاقوؤں کے وار سے باپ کو قتل کرڈالا

  

ماسکو(این این آئی)روس میں پولیس نے3 نوجوان لڑکیوں کو جو آپس میں سگی بہنیں بتائی جاتی ہیں اپنے والد پر جنسی تشدد کے بعد اسے چاقو کے وار کرکے ہلاک کرنے کا الزام عاید کیا ہے۔

عرب ٹی وی کے مطابق سنگ دل باپ کی 3بیٹیوں نے اپنے والد کی سختیوں اور بے جاتشدد سے تنگ آکر بالآخر اسے موت کے گھاٹ اتار دیا۔مقتول کی شناخت میخائل خاشاتوریان کے نام سے کی گئی ہے۔ تینوں بیٹیوں کا کہنا تھا کہ ان کے والد نے ان کی زندگی اجیرن بنا رکھی تھی۔ وہ روزانہ ان کی مارپیٹ کرتا، گھر میں بند رکھتا اور طرح طرح کے تشدد کے حربے استعمال کرتا، نشے کا عادی تھا۔ تنگ آکر بالاخر انہوں نے سنگ دل والد سے گلو خلاصی کے لیے اسے چاقو اور کلہاڑے کے وار کرکے موت کی نیند سلا دیا۔روس میں قانون نافذ کرنے والے اداروں کے ذرائع کا کہنا تھا کہ اپنے والد کی قاتل3 لڑکیوں کوحراست میں لیا گیا ہے۔

رپورٹ کے مطابق لڑکیوں کی شناخت 19 سالہ کریسٹینا، 18 سالہ انجلینا اور 17 سالہ ماریا کے ناموں سے کی گئی ہے۔میخائل خاشتوریان کے بارے میں مختلف آراء سامنے آئی ہیں۔ ایک طرف وہ سخت مذہبی شخص تھا اور بیٹیوں کو گھر کے اندر بھی مذہبی لباس استعمال کرنے پر سختی سے کار بند کرنے کی کوشش کرتا مگر دوسری طرف وہ منشیات مافیا کا بھی سرغنہ تھا۔ پولیس کا کہنا تھا کہ جب انہوں مقتول کی گاڑی کی تلاشی لی تو اس میں انہیں آتشیں اسلحہ اور 2کلو گرام ہیروئن بھی ملی۔اہل محلہ اور خاشوریان کے جاننے والے بھی اسے ایک سخت گیر اور سنگ دل شخص کے طورپر جانتے ہیں۔

مزید : بین الاقوامی