’’ایک آزاد امیدوار ہم سے ملاقات کرنے کیلئے آ رہے تھے ، وہ لاہور داخل ہوئے تو ان کے فون پر کال آئی کہ۔۔۔‘‘ رانا ثنااللہ نے انتہائی خوفناک بات کہہ دی

’’ایک آزاد امیدوار ہم سے ملاقات کرنے کیلئے آ رہے تھے ، وہ لاہور داخل ہوئے ...
’’ایک آزاد امیدوار ہم سے ملاقات کرنے کیلئے آ رہے تھے ، وہ لاہور داخل ہوئے تو ان کے فون پر کال آئی کہ۔۔۔‘‘ رانا ثنااللہ نے انتہائی خوفناک بات کہہ دی

  


لاہور (ڈیلی پاکستان آن لائن )مسلم لیگ ن کے رہنما رانا ثنا ءاللہ نے کہا ہے کہ آزاد امیدواروں کو بھیڑ بکریوں کی طرح ہانک کر بنی گالا لے جایا جا رہاہے، پنجاب میں وزیر اعلیٰ سے پہلے سپیکر کا انتخاب ہو گا ۔ اگر لوگوں نے جمہوریت اور ضمیر کی آواز پر لبیک کہا تو ایک بڑا اپ سیٹ ہوجائے گا ۔دوتین لوگوں کو ملنے کے لئے لاہور بلایا گیا اور جب وہ لاہور میں داخل ہو رہے تھے تو انہیں فون آیا کہ آپ کی لوکیشن لاہور آرہی ہے ، آپ باز نہیں آئے ،بہتر ہو گا آپ لوگ واپس چلے جائیں 

جیو نیوز کے پروگرام ”آج شاہ زیب خانزادہ کے ساتھ “ میں گفتگو کرتے ہوئے رانا ثنا ءاللہ نے کہا ہے کہ ہمارا پنجاب میں حکومت بنانے کا ارادہ ہے اور ہمارا یہ حق بھی ہے ۔ تحریک انصاف تو ایک آزاد امیدوار کو اپنی طرف مائل کرنے کے قابل نہیں تھی لیکن سب کو بھیڑ بکریوں کی طرح ہانک کر اور کسی کو جہانگیر ترین کے جہاز میں بٹھا کر بنی گالہ لے گئے ہیں ۔ اس سے ملک جمہوریت کی جانب نہیں جارہا ۔ یہ کوئی جمہوری عمل نہیں ہے ۔ انہوں نے کہا کہ مسلم لیگ ن کے اجلاس میں امیدواروں کی تعداد پوری تھی اور 121کی حاضری تھی اور جو نہیں آئے انہوں نے آگاہ کیا تھا ۔ پارلیمانی لیڈر کے تقرر کے بعد جو عمل ہوگا اس سے پارلیمانی لیڈر وزیر اعلیٰ بھی بن سکتا ہے اور اپوزیشن لیڈر بھی بن سکتا ہے لیکن ہم اپنے آئینی حق کے لئے بھرپور طور پر لڑیں گے ۔ اگر ایسا نہیں کریںگے توپھر یہ قوتیں کیسے بے نقاب ہونگی ؟ انہوں نے کہا کہ پنجاب میں حکومت بنانا ہماری جمہوری اور آئینی حق ہے ۔ پیپلز پارٹی کے حوالے سے سوال پر انہوں نے کہا کہ پیپلز پارٹی کے جو 6ووٹ ہیں وہ مخدوم احمد محمود ہیں اور ان کی ملاقات شہبازشریف سے ہوئی ہے ۔

انہوں نے کہا کہ سپیکر کا انتخاب وزیر اعلیٰ کے انتخاب سے پہلے ہوگا ۔ اس لئے اگر جمہوریت اور ضمیر کی آواز پر لبیک کہا گیا تو اپ سیٹ ہو سکتا ہے جو ان قوتوں کے پاﺅں اکھاڑ دیگا۔انہوں نے کہا کہ 11آزاد امیدواروں نے شہبازشریف کو یقین دہانی کروائی اور اس حوالے سے شہبازشریف نے پالیمانی پارٹی کے ارکان کو اعتماد میں لیاہے ۔ انہوں نے کہا کہ دوتین لوگوں کو ملنے کے لئے لاہور بلایا گیا اور جب وہ لاہور میں داخل ہو رہے تھے تو انہیں فون آیا کہ آپ کی لوکیشن لاہور آرہی ہے ، آپ باز نہیں آئے ،بہتر ہو گا آپ لوگ واپس چلے جائیں ۔انہوں نے کہا کہ یہ ملک کے لئے بہتر نہیں ہورہا۔ میڈیا ڈر چکا ہے جو کہتا ہے کہ حلقہ کھلوا لیں، حلقہ کھولنے یا باکس کھولنے سے کیا ہوگا ؟ الیکشن سے ایک ماہ پہلے جو ہوتا رہاہے اس پر میڈیا نے آواز نہیں اٹھائی۔ہم جو کرتے رہے ہیں ہمیں بھی پتہ ہے اور میڈیا جوکرتا رہا ہے اس کو بھی پتہ ہے ۔ ایک بڑے طوفان سے پہلے جو سکوت ہوتا ہے یہ ایسی صورتحال چل رہی ہے اور یہ زیادہ عرصہ نہیں چلے گی ۔

مزید : قومی


loading...