ٹریفک جرمانے بڑھانے، کاغذی چالان ختم، خلاف ورزی پر 2سال تک لائسنس منسوخی فیصلہ

ٹریفک جرمانے بڑھانے، کاغذی چالان ختم، خلاف ورزی پر 2سال تک لائسنس منسوخی ...

  

 لاہور(کرائم رپورٹر)پنجاب بھر میں گاڑیوں کے چالان پر جْرمانہ بڑھانے کا فیصلہ کر لیا گیا۔ تفصیلات کے مطابق پنجاب کی صوبائی سب کابینہ کمیٹی برائے قانون نے ٹریفک مینجمنٹ ریفارمز صوبائی موٹروہیکلز ترمیمی بل 2019ء تیار کر لیا۔ ٹریفک قوانین کی خلاف ورزی پر بھاری جرمانے اور مکمل ای چالان کیاجائے گا۔قوانین کی خلاف ورزی پر 6 ماہ سے 2 سال تک لائسنس بھی منسوخ کیا جا سکے گا۔ ترمیمی بل 2019ء کی حتمی منظوری پنجاب کے صوبائی کابینہ کے اجلاس میں دی جائے گی۔ موٹر سائیکل کا کم سے کم چالان 200 روپے کے بجائے 300 روپے کرنے جبکہ کم عمر کے موٹر سائیکل چلانے پر 150 فیصد جرمانہ بڑھا کر 500 روپے کرنے کی سفارش کی گئی۔ اسی طرح بڑی گاڑیوں کے جرمانوں میں بھی اضافہ کرنے کی سفارش کی گئی ہے۔حکومت پنجاب کے محکمہ قانون اور محکمہ داخلہ پنجاب کی مشاورت سے مسودہ قانون تیار کیا گیا، اس حوالے سے قومی اخبار کو موصول ہونے والی دستاویزات کے مطابق ترمیمی بل مسودہ 2019ء کے مطابق موٹر سائیکل چلانے والے کو ٹریفک کی خلاف ورزی پر جرمانہ، لائسنس منسوخ یا پھر موٹر سائیکل ضبط بھی ہو سکے گا۔ اسی طرح بل کے مطابق موٹرسائیکل کی لائٹ خراب ہونے یا نہ ہونے کی صورت میں 200 روپے سے بڑھا کر 300 روپے جبکہ بڑی گاڑیوں کے 500 روپے سے بڑھا کر 750 روپے کرنے کی سفارش کی گئی۔موٹر وہیکلز بل یا رجسٹریشن اتھارٹی کی منظور شدہ نمبر پلیٹ کے بغیر فینسی یا الگ سے ہٹ کر تیار کی گئی غیر قانونی نمبر پلیٹ لگانے پر موٹر سائیکل کو 1 ہزار روپے جرمانہ ہوگا، جبکہ کار اور جیپ کو 2 ہزار روپے اور بڑی گاڑی ٹریکٹر، ٹرالی وغیرہ کو 5 ہزار روپے جرمانہ عائد کیا جائے گا۔ مسودہ بل کے مطابق الیکٹرانک ڈولپرز کے ذریعے ہی چلان کیا جائے گا، ای چلان پر بینک کا نام درج ہو گا، جرمانے کو متعلقہ شہری 15 روز میں چیلنج کر سکتا ہے ورنہ جرمانہ جمع کروانے کا ہر صورت پابند ہوگا۔مقررہ مدت میں چالان جمع نہ کروانے پر ٹوکن ٹیکس کے ساتھ ہی ڈبل جرمانے کے ساتھ جمع کروانے کا پابند ہو گا۔ اگر جرمانہ جمع نہیں کروایا جائے گا تو گاڑی ضبط ہو سکے گی۔ غلط اور خطرناک ڈرائیونگ کرنے پر موٹر سائیکل کا جرمانہ 300 روپے تھا جو بڑھا کر 400 روپے کرنے کی سفارش کی گئی ہے۔ اس حوالے سے وزیر قانون پنجاب راجہ بشارت کا کہنا ہے کہ حتمی منظوری پنجاب کابینہ کے اجلاس سے لی جائے گی، حکومت چاہتی ہے کہ سب لوگ ٹریفک کے قوانین کے پابندی کریں۔

مزید :

علاقائی -