کلین واٹر کیس، پنجاب حکومت پانی کو محفوظ کرنے کیلئے تمام وسائل بروئے کا ر لائے: لاہور ہائیکورٹ

  کلین واٹر کیس، پنجاب حکومت پانی کو محفوظ کرنے کیلئے تمام وسائل بروئے کا ر ...

  

 لاہور(نامہ نگارخصوصی)لاہور ہائیکورٹ کے جسٹس شاہد کریم نے صاف پانی کیس میں صاف پانی کو محفوظ کرنے کے لئے تمام وسائل بروئے کار لانے کا حکم دے دیاہے۔کیس کی سماعت شروع ہوئی تو عدالتی حکم پر ایم ڈی واسا نے عدالت میں پیش ہوکرعدالت کو بتایاکہ پانی کی بلنگ والے میٹرز پر کسٹم ڈیوٹی بہت زیادہ ہے جس پر عدالت نے ایف بی آر کو کسٹم ڈیوٹی کم کرنے سے متعلق آئندہ تاریخ سماعت پر رپورٹ عدالت میں پیش کرنے کا حکم دیتے ہوئے کہا کہ پانی کے میٹروں میں عوام کو کہاں تک رعایت دی جا سکتی؟عدالت میں واٹر کمیشن کی جانب سے نمائندے سید کمال حیدر نے رپورٹ پیش کرتے ہوئے کہا کہ 69کارواشنگ سٹیشن سیل کئے گئے ہیں جبکہ 15 روز تک ریسائکلنگ پلانٹ لگنے کا وقت دے دیا اس کے بعد عمل درآمد نہ کرنے پرانہیں مکمل سیل کردیا جائے گا اور گڑھے کھود کر پانی کی نکاسی کا عمل کو 15روز میں بند کیا جائے گا، پانی کو آلودہ کرنے والی 14فیکٹریوں کو نوٹس جاری کردئیے ہیں،انہوں نے بتایا کہ فیکٹری مالکان نے صاف پانی کو آلودہ کرنا بند نہ کیا تو 15روز بھی فیکٹری بھی سیل کردیں گے، سرکاری وکیل نے عدالت کو آگاہ کیا کہ عدالتی حکم پر وزیراعلیٰ پنجاب نے شام 7بجے اجلاس طلب کرلیاہے،عدالت نے ریماکس دیئے کہ جسٹس ریٹائرڈ علی اکبر قریشی کی سربراہی میں واٹر کمیشن تشکیل دیا گیا تھا،عدالت نے اجلاس میں چیئرمین واٹر کمیشن جسٹس ریٹائرڈ علی اکبر قریشی کو بھی شامل کیاجائے اور صاف پانی کو محفوظ کرنے کے لئے تمام وسائل بروئے کار لائے جائیں، عدالت نے آئندہ سماعت پر ڈی جی ماحولیات کو طلب کرتے ہوئے چیئرمین ایف بی آر کو پانی کی بلنگ والے میٹرز کے معاملہ کسٹم ڈیوٹی کا جائزہ لے کر رپورٹ عدالت میں پیش کرنے کی ہدایت کردی۔

کلین واٹر کیس

مزید :

صفحہ آخر -