عیدالا ضحی، محکمہ بلدیات کا صفائی کے حوالے سے خصوصی سرگرمیاں جاری

عیدالا ضحی، محکمہ بلدیات کا صفائی کے حوالے سے خصوصی سرگرمیاں جاری

  

پشاور(سٹاف رپورٹر)محکمہ بلدیات خیبرپختونخوا کی عیدالاضحیٰ کے حوالے سے خصوصی صفائی سرگرمیاں جاری ہیں۔ اس سلسلے میں تحصیل میونسپل انتظامیہ کے ذریعے اب تک صوبے میں پانچ لاکھ سے زائد ماحول دوست بیگز عوام میں تقسیم کئے گئے ہیں۔جمعہ کے روز محکمہ بلدیات کی جانب سے صوبے میں جاری خصوصی صفائی سرگرمیوں پر اپنے تاثرات کا اظہار کرتے ہوئے وزیراعلیٰ خیبرپختونخوا کے معاون خصوصی برائے اطلاعات و بلدیات کامران بنگش نے کہا ہے کہ خیبرپختونخوا میں صفائی کی بہترین خدمات فراہم کرنے اور صحت مندانہ ماحول برقرار رکھنے کی غرض سے عیدالاضحی پر الائشیں ٹھکانے لگانے کے لئے مخصوص بیگز تقسیم کر رہے ہیں۔ صوبے کی 128 تحصیلوں اور ٹاؤنز میں پانچ لاکھ سے زائد بیگز کی تقسیم جاری ہے۔معاون خصوصی کامران بنگش نے کہا کہ آلائشوں اور جانوروں کے فضلہ کو اِن بیگز کے ذریعے مخصوص جگہوں سے اُٹھا کر تلف کیا جائے گا تا کہ اس طرح عوام کے صحت اور صفائی بارے منفرد اقدامات سے اہداف کا حصول یقینی بناسکیں۔وزیراعلیٰ محمود خان کا ذکر کرتے ہوئے معاون اطلاعات و بلدیات کامران بنگش نے کہا کہ وزیراعلیٰ خیبرپختونخوا نے عیدالاضحیٰ پر صفائی اور احتیاطی تدابیر بارے نگرانی کی ہدایات دی ہیں۔ تحصیل میونسپل انتظامیہ اور واٹر سینیٹیشن کمپنیاں عید کے دنوں میں متحرک رہیں گی۔ عوام کو صفائی کے حوالے سے تمام تر خدمات فراہم کریں گے۔شہریوں سے اپیل کرتے ہوئے معاون وزیراعلیٰ کامران بنگش نے کہا کہ عوام بھی صفائی کے متعلق اپنی ذمہ داری نبھائیں اس سلسلے میں عوام سے صفائی اور احتیاطی تدابیر بارے بھرپور تعاون کی اُمید ہے کیونکہ حکومتی کوششیں تب تک بارآور ثابت نہیں ہو سکتیں جب تک عوام اپنا کردارادا نہ کرے۔خیبرپختونخوا میں نئے ضم شدہ اضلاع میں بلدیاتی خدمات کی فراہمی بارے معاون خصوصی کامران بنگش نے واضح کیا کہ مذکورہ مہم قبائلی اضلاع میں بھی جاری ہے تاکہ صوبے میں کہیں پر بھی صفائی و صاف ماحول کے حوالے سے کوئی شکایت موصول نہ ہو۔وزیراعلیٰ کے معاون خصوصی کامران بنگش نے عید کے تینوں دن ڈیوٹی دینے کا اعلان کرتے ہوئے کہا کہ میں عیدالاضحیٰ کے تین دن مسلسل فیلڈ سرگرمیوں کو مانیٹر کروں گا اور خود بھی تعاون کروں گا کیونکہ ہماری حکومت سب سے پہلے عوام پھر آرام کے ایجنڈے پر عمل پیرا ہے۔

مزید :

صفحہ اول -