ایران اور امریکی ریاست کینٹکی میں سیلاب سے 81افراد ہلاک، 18لاپتہ

ایران اور امریکی ریاست کینٹکی میں سیلاب سے 81افراد ہلاک، 18لاپتہ

  

        تہران، شکاگو(نیوز ایجنسیاں)ایرانی ہلال احمر سوسائٹی کے ریسکیو اینڈ ریلیف اتھارٹی کے سربراہ نے اعلان کیا ہے کہ حالیہ طوفانی بارشوں سے متعدد صوبوں میں ہلاکتوں کی تعداد 56 ہو گئی ہے جبکہ 18افراد  لاپتہ ہوئے۔ایرانی خبر رساں ایجنسی نے بتایا کہ 23جولائی سے اب تک 21صوبوں کو سیلاب نے اپنی لپیٹ میں لے لیا اور جمعہ کی شام کو ہونیوالی طوفانی بارشوں سے سب سے زیادہ متاثر ہونیوالے صوبے تہران، یزد، اصفہان، چہارمحل اور بختیاری میں درجنوں مقامات زیر آب آگئے۔موسلا دھار بارش کی لہر نے ایران کو نشانہ بنایا جس کے نتیجے میں بڑے پیمانے پر سیلابی ریلے پھوٹ پڑے۔ایرانی فوج کے کمانڈر عبدالرحیم موسوی نے جمعہ کے روز ہلاک ہونیوالوں کی تعداد میں اضافے کے بعد زمینی افواج کو سیلاب سے متاثرہ علاقوں میں مداخلت کرنیکی ہدایت کی۔دریں اثناء امریکی ریاست کینٹکی کے مشرقی علاقوں میں شدید بارشوں کے نتیجے میں آنیوالے سیلاب سے مرنے والوں کی تعداد کم از کم 25 ہو گئی، جن میں ایک خاندان کے چار بچے بھی شامل ہیں۔ کینٹکی کے گورنر اینڈی بیشیر نے تصدیق کی کہ کم از کم ایک درجن مزید افراد لاپتہ ہیں اور کچھ علاقوں تک رسائی حاصل نہیں  ہے جبکہ ہلاکتوں کی تعداد میں اضافے کا سلسلہ جاری رہے گا۔ مقامی میڈیا نے بیشیر کے حوالے سے بتایا کہ سیلاب سے متاثر ہونے والی کمیونٹیز کو دوبارہ تعمیر کرنے میں شاید برسوں لگیں گے۔ کینٹکی پاور کے مطابق ہفتہ کی صبح تک ریاست بھر میں 16ہزار صارفین بجلی سے محروم ہیں۔ بیشیر نے پورے کینٹکی کیلئے ہنگامی حالت کا اعلان کیا ہے اور جمعرات کو سب سے زیادہ متاثرہ حصوں کی مدد کیلئے نیشنل گارڈ کو بلایا ہے۔ تین ریاستی پارک ان لوگوں کیلئے جمعہ کو کھولے گئے جو پناہ لینے کیلئے اپنے گھروں سے محروم ہوگئے ہیں۔ مغربی ورجینیا کے گورنر جم جسٹس نے 6کانٹیوں کیلئے ہنگامی حالت کا اعلان کر دیا ہے۔ امریکی صدر جو بائیڈن نے بحالی کی کوششوں میں مدد کیلئے وفاقی فنڈنگ کا اعلان کرتے ہوئے ڈیزاسٹر ڈیکلریشن کی منظوری دی ہے۔ 

سیلاب

مزید :

صفحہ آخر -