اسلام آباد ، مسلم لیگ (ن) 21یونین کونسلوں میں فاتح ، تحریک انصاف کے 18چیئرمین منتخب، 11نشستیں آزاد امیدوار جیت گئے

اسلام آباد ، مسلم لیگ (ن) 21یونین کونسلوں میں فاتح ، تحریک انصاف کے 18چیئرمین ...

  

اسلام آباد (سٹاف رپورٹر)وفاقی دارالحکومت کی تاریخ میں پہلی بار ہونے والے بلدیاتی انتخابات میں تمام 50یونین کونسلوں کے نتائج کے مطابق مسلم لیگ ن نے21 نشستیں، تحریک انصاف نے 18سیٹیں حاصل کر لیں جبکہ11آزاد چئیرمین کامیاب ہو گئے۔ ،تحریک انصاف کے امیدواروں نے اسلام آباد کی یونین کونسل نمبر7،8،33،35،37،38،40،44اور50سے کامیابی حاصل کی ہے جبکہ مسلم لیگ ن کے سردارمہتاب یو سی 41،چوہدری مطلوب یو سی22سے کامیاب ہوئے ،یو سی 26سے بھی ن لیگ کامیاب ہوئی یو سی 32سے ن لیگ کے منیر اشرف نے کامیابی حاصل کی یو سی 23سے آزادامیدوار جمیل کھوکھر کامیاب ہوگئے۔ یو سی 5سے مسلم لیگ (ن) کے واحد کیانی 812ووٹ لے کر کامیاب ہوئے جبکہ یو سی 26سے (ن)لیگ کے ہی چوہدری اللہ دتہ نے میدان مارا، یونین کونسل 32سے (ن)لیگ کے ملک منیر اشرف جبکہ یو سی 41سے سردار مہتاب خان کامیاب ہوئے۔ یونین کونسل 35میں پاکستان تحریک انصاف کے امیدوار نے میدان ماراجبکہ یو سی 37میں تحریک انصاف کے ملک ساجد محمود کامیاب رہے، یونین کونسل 38 سے پاکستان تحریک انصاف کے تنویر قاضی جبکہ یو سی 40سے تحریک انصاف کے علی عون نے کامیابی حاصل کی،یونین کونسل44میں پاکستان تحریک انصاف کے امیدوار کو برتری حاصل ہے جبکہ 2نشستوں پر آزاد امیدوار کامیاب ہوئے ہیں۔غیر سرکاری اور غی حتمی نتائج کے مطابق بلدیاتی انتخابات میں سب سے بڑا اپ سیٹ مسلم لیگ ن کے اہم ترین رہنما، سابق وفاقی وزیر،قانون دان ظفر علی شاہ کی صورت میں سامنے آیا، جب وہ الیکشن ہار گئے ہیں، بلدیاتی الیکشن میں بڑے بڑے برج الٹ رہے گئے لیکن سب سے بڑا جو برج الٹا ہے وہ ہیں ن لیگ کے ظفر علی شاہ کا ہے، جنہیں آزاد امیدوار نے شکست دی۔انجم عقیل کے بہنوئی کو شعیب خان نے شکست دی ہے اسی طرح عمران کے گھر کی یونین کونسل سے تحریک انصاف ہار گئی ہے،اب تک کے غیر حتمی اور غیر سرکاری نتائج کے مطابق آزاد امیدوار نعیم علی گجر نے824،تحریک انصاف کے امیدوار عامر شیخ نے415 جبکہ ن لیگ کے ظفر علی شاہ نے304ووٹ حاصل کئے ہیں۔اطلاعات کے مطابق ظفر علی شاہ اسلام آباد میں ن لیگ کی طرف سے میئر کے متوقع امیدوار تھے۔دوسری جانب پی ٹی آئی کے متعدد امیدواروں نے اپنے اپنے علاقوں میں میدان مارا اور بلے کا بول بالا کیا، یوسی35، یوسی44، یوسی37 پر تحریک انصاف تمام وارڈز میں کامیاب ہوئی، یوسی40 میں پاکستان تحریک انصاف نے کامیابی حاصل کی، یوسی38میں بھی تحریک انصاف نے کلین سوئپ کیا، جب کہ یوسی50کے تمام وارڈز پر تحریک انصاف کامیاب ہوئی۔وفاقی دارالحکومت میں 50یونین کونسلوں میں 6 لاکھ سے زائد رجسٹرڈ ووٹرز نے اپنا حق رائے دہی استعمال کیا،50 یونین کونسلوں میں پولنگ کا عمل صبح ساڑھے 7 بجے شروع ہوا جو بلا تعطل شام ساڑھے 5 بجے تک جاری رہا،حلقے میں پولنگ شروع ہوتے ہی انتہائی جوش و خروش دیکھا گیا اور لوگوں کی بڑی تعداد نے پولنگ اسٹیشن کی جانب رخ کیا۔اسلام آباد کی 650 نشستوں پر 2 ہزار396 امیدواروں میں مقابلہ ہوا۔اسلام آبادمیں بلدیاتی انتخابات میں چیئرمین کیلئے 255 ، جنرل نشستوں پرایک ہزار210 ، خواتین کی نشستوں پر351، کسان اور مزدوروں کی نشستوں پر 248، نوجوانوں کی نشستوں پر230 جب کہ اقلیتی نشستوں پر102 امید وارمدمقابل تھے۔، وفاقی دارالحکومت کی 650 نشستوں پر 972 آزاد امیدواروں سمیت میدان سیاست کے 2400 شہ زوروں نے انتخابی دنگل میں حصہ لیا، مسلم لیگ ن نے 506، تحریک انصاف نے 479 اور جماعت اسلامی نے 164 امیدوار میدان میں اتارے، جب کہ پیپلز پارٹی کو صرف 81 امیدوار میسر آسکے۔پولنگ کے روز وزارت داخلہ نے عام تعطیل کا تو اعلان نہیں کیا تاہم تعلیمی اداروں میں مکمل جب کہ سرکاری دفاتر میں آدھے دن کی چھٹی رہی اور سرکاری ملازمین نے دوپہر 2 بجے کے بعد اپنا ووٹ کاسٹ کیا۔اسلام آباد میں بلدیاتی انتخابات کے دوران پرامن اندازمیں انتخابات کے انعقاد کیلئے سیکیورٹی کے انتہائی سخت انتظامات کئے گئے اور8 ہزارسے زائد پولیس اور ایف سی اہلکاروں نے سیکیورٹی کے فرائض انجام دیئے اس کے علاوہ کسی بھی ہنگامی صورتحال سے نمٹنے کے لئے 625 فوجی جوان اور رینجرزکے 700 اہلکار بھی کوئیک رسپانس فورس کے طورپرالرٹ رہے۔ پولیس، ایف سی، اسپیشل برانچ اور پاک فوج کے جوانوں کو خصوصی موبائل سمیں فراہم کی گئیں جن کی مانیٹرنگ جی پی آر ایس کے ذریعے کی گئی۔

مزید :

صفحہ اول -