کراچی چیمبر کا متروکہ وقف املاک بورڈ کیخلاف اپیل دائر کرنے کا فیصلہ

کراچی چیمبر کا متروکہ وقف املاک بورڈ کیخلاف اپیل دائر کرنے کا فیصلہ

کراچی (اکنامک رپورٹر)کراچی چیمبر کے صدر مفسر عطا ملک نے کہا ہے کہ متروکہ وقف املاک بورڈ کے چیئرمین نے کراچی چیمبر کی عمارت کے مالکانہ حقوق سے متعلق ایک جھوٹے اور بوگس ریفرنس میں کراچی چیمبر کے خلاف فیصلہ دیا تاہم یہ فیصلہ حتمی نہیں ۔کراچی چیمبر کے کرایہ داروں کو بھیجے گئے ایک خط میں مفسر ملک نے کہا کہ متروکہ وقف املاک بورڈ کسی بھی صورت اپنے فیصلے پر عمل درآمد کے لئے کرایہ د اروں کو مجبور نہیں کرسکتا جب تک کہ کراچی چیمبر کو معزز عدالت کی جانب اس حوالے سے کوئی ہدایات موصول نہیں ہوجاتیں۔انہوں نے کہاکہ کراچی چیمبر نے متروکہ وقف املا ک بورڈ کے ریفرنس کی قابل سماعت ہونے کی حیثیت کو معزز سندھ ہائی کورٹ میں چیلنج کیا گیا ہے جس کا پٹیشن نمبر D-2464/2017 ہے۔معزز ہائی کورٹ نے قانون کے مطابق متروکہ املاک بورڈ کے ریفرنس کو نمٹانے کے احکامات جاری کیے ہیں لہٰذا چیئرمین ای ٹی پی بی کے اس غیرمنصفانہ فیصلے کو پٹیشن نمبر D-2464/2017کے ذریعے معزز سندھ ہائی کورٹ میں؂؂؂؂؂؂ پیش کیاجائے گا۔

مفسر عطا ملک نے واضح الفاظ میں کہاکہ متروکہ وقف املاک بورڈ نے کراچی چیمبر کی عمارت کے قابضین کے ساتھ مل کراپنے ہی چیئرمین کے سامنے ایک جھوٹا اور بے بنیاد ریفرنس دائر کیا۔یہ قابضین پی ایم ایل این کے ممبر ہیں جبکہ چیئرمین متروکہ وقف املاک بورڈ کی جانب سے اس فیصلے کے ذریعے ایک ن لیگی ممبر نے دوسرے ن لیگی ممبر کی طرف داری کی کرتے ہوئے یکطرفہ فیصلہ دیا۔انہوں نے کہاکہ پٹیشن نمبر D-2464/2017کے علاوہ کراچی چیمبر اپنے حقوق کے تحفظ کے لیے ای ٹی پی بی کے چیئر مین کے فیصلے کے خلاف مناسب فورم پراپیل دائر کرے گا اور تمام دستیاب ذرائع کو استعمال کرتے ہوئے ای ٹی پی بی کے چیئر مین کے اس غیر منصفانہ اور یکطرفہ فیصلے کو کالعدم قرار دینے کے لیے ہرممکن کوشش کرے گا چاہے انصاف کے حصول کے لیے انہیں سپریم کورٹ آف پاکستان سے ہی کیوں نہ رجوع کرنا پڑے۔انہوں نے کہاکہ ای ٹی پی بی کے ریفرنس کے ابتدائی مرحلے سے ہی کراچی چیمبراس غیرمنصفانہ فیصلے کی توقع کررہاتھا لہٰذا کراچی چیمبر کے عہدیداران چیئرمین ای ٹی پی بی کے متعصب رویے، کے سی سی آئی کے خلاف طاقت کے غلط استعمال اورمسلم لیگ ن کے ممبران کی طرف داری کرنے کو وقتاًوقتاً میڈیا میں بیانات کے ذریعے اجاگر کرتے رہے ہیں۔کے سی سی آئی کے صدر نے واضح طور پر آگاہ کیا کہ کرایہ د ار ای ٹی پی بی کے جھوٹے اور بے بنیاد ریفرنس میں یکطرفہ فیصلے پر کسی قسم کی کوئی توجہ نہ دیں۔یہ عمارت کراچی چیمبرآف کامرس کے ممبران ، منیجنگ کمیٹی کے اراکین اورکے سی سی آئی کے عہدیداران کا اثاثہ ہے جو بزنس مین گروپ اور تاجروصنعتکار برادری کے منتخب نمائندے ہیں ، اس پراپرٹی کے نگران ہیں اور وہ اپنے حق کے لیے آخری حد تک لڑتے رہیں گے جس میں سالوں لگ سکتے ہیں۔

مزید : کامرس