اگر کسی نے چالاکی دکھائی تو وائس چانسلر اور رجسٹرار کو نہیں چھوڑوں گا، چیف جسٹس لاہورہائیکورٹ کے کیس میں ریمارکس

اگر کسی نے چالاکی دکھائی تو وائس چانسلر اور رجسٹرار کو نہیں چھوڑوں گا، چیف ...
اگر کسی نے چالاکی دکھائی تو وائس چانسلر اور رجسٹرار کو نہیں چھوڑوں گا، چیف جسٹس لاہورہائیکورٹ کے کیس میں ریمارکس

  

لاہور(ڈیلی پاکستان آن لائن)نومنتخب ممبران پنجاب بار کونسل کی ڈگریوں کو چیک کرنے کے معاملے پر چیف جسٹس قاسم خان نے ریمارکس دیتے ہوئے کہاہے کہ اگر کسی نے چالاکی دکھائی تو وائس چانسلر اور رجسٹرار کو نہیں چھوڑوں گا۔جس نے عدالت نے میں غلط رپورٹ دی تھی ان کو نہیں چھوڑوں گایونیورسٹی حکام نے عدالت کو تماشا بنا رکھا ہے ۔

نجی ٹی وی 92 نیوز کے مطابق لاہورہائیکورٹ میں نومنتخب ممبران پنجاب بار کونسل کی ڈگریوں کو چیک کرنے کے معاملے پر سماعت ہوئی، وکلا کمیٹی نے کہا کہ عدالت کے حکم پر 10 وکلا کی ڈگریوں کاریکارڈ چیک کیا،تمام وکلا کی ڈگریوں کوچیک کرنے کیلئے مہلت دی جائے ،وکیل یونیورسٹی نے کہاکہ جمیل اصغر بھٹی کی ڈگری کے معاملے پر وائس چانسلر نے اعلیٰ سطح کمیٹی بنا دی۔

چیف جسٹس ہائیکورٹ نے کہاکہ اگر کسی نے چالاکی دکھائی تو وائس چانسلر اور رجسٹرار کو نہیں چھوڑوں گا۔جس نے عدالت نے میں غلط رپورٹ دی تھی ان کو نہیں چھوڑوں گایونیورسٹی حکام نے عدالت کو تماشا بنا رکھا ہے ۔عدالت نے استفسار کیا کہ یہ جعلی ڈگریاں کس طرح کینسل ہوں گی ،وکیل یونیورسٹی نے کہاکہ 8 دسمبر کو میٹنگ میں اس کافیصلہ کریں گے چیف جسٹس ہائیکورٹ نے کہاکہ تمام ممبران پنجاب بار کونسل کی ڈگریاں چیک کریں اور رپورٹ دیں ۔

عدالت نے تمام نومنتخب ممبران پنجاب بار کونسل کی ڈگریاں مرحلہ وار تصدیق کرنے کی ہدایت کردی،عدالت نے کہاکہ وائس چانسلرز ذاتی طور پر وکلا کی ڈگریوں کی جانچ پڑتال کروا کے رپورٹ دیں ،ہائیکورٹ نے آئندہ سماعت پر ڈگریوں کی رپورٹ پیش کرنے کی ہدایت کرتے ہوئے سماعت 7 دسمبر تک ملتوی کردی۔

مزید :

قومی -علاقائی -پنجاب -لاہور -