لاہور ہائیکورٹ نے بچوں کی حوالگی کی آئینی درخواست پر قانونی نقطہ طے کردیا

لاہور ہائیکورٹ نے بچوں کی حوالگی کی آئینی درخواست پر قانونی نقطہ طے کردیا
لاہور ہائیکورٹ نے بچوں کی حوالگی کی آئینی درخواست پر قانونی نقطہ طے کردیا

  

لاہور ( ڈیلی پاکستان آن لائن ) لاہور ہائیکورٹ نے بچوں کی حوالگی کی آئینی درخواست پر قانونی نقطہ طے کردیا،  فیصلے میں کہا گیاکہ آئینی درخواست پر لاہور ہائیکورٹ کی پرنسپل سیٹ یا کوئی بھی بینچ سماعت کرسکتا ہے ۔

لاہور ہائیکورٹ کے جسٹس طارق سلیم شیخ نے نو صفحات پر مشتمل تحریری فیصلہ جاری کیا  ، فیصلے میں کہا گیا کہ آئینی درخواست پر عدالتی دائرہ اختیار کا اعتراض اٹھانا درست نہیں،  روالپنڈی سے بچوں کی حوالگی کے لیے لاہور ہائیکورٹ میں درخواست دائر کی گئی ،خاتون کے شوہر کے وکیل نے ہائیکورٹ میں درخواست دائر کرنے پر اعتراض دائر کیا ، وکیل نے ہائیکورٹ روالپنڈی بینچ میں درخواست گزار کو درخواست دائر کرنے کا دائرہ اختیار بتایا ،عدالت خاتون کے شوہر کے وکیل کا اعتراض مسترد کرتی ہے۔

عدالت نے اپنے فیصلے میں  دونوں بچو ں کو عدالت پیش کرنے کا حکم دیا اور قانون نقطہ طے کر دیا کہ آئینی درخواست پر لاہور ہائیکورٹ کی پرنسپل سیٹ یا کوئی بھی بینچ سماعت کرسکتا ہے ۔فیصلے میں نواز شریف سمیت سپریم کورٹ کے حوالہ جات دیئے گئے۔

واضح رہے کہ درخواست گزار خاتون کی جانب سے موقف اپنایا گیا تھا کہ شوہر نے اسے گھر سے نکال دیا ہے اور دونوں بچوں کو زبردستی اپنے پاس رکھا ہے ۔

مزید :

قومی -جرم و انصاف -