ایلون مسک انسانی دماغ میں چپ لگانے کے منصوبے کے قریب پہنچ گئے

ایلون مسک انسانی دماغ میں چپ لگانے کے منصوبے کے قریب پہنچ گئے
ایلون مسک انسانی دماغ میں چپ لگانے کے منصوبے کے قریب پہنچ گئے

  

نیویارک(ڈیلی پاکستان آن لائن ) دنیا کے امیر ترین شخص ایلون مسک کی کمپنی "نیورالنک "ایک سکے کے حجم کی  کمپیوٹر چپ کو 6 ماہ کے اندر انسانی مریضوں کے دماغ میں نصب کرے گی۔

نیویارک ٹائمز کے مطابق ، ایلن مسک نے گزشتہ روز کانفرنس کے دوران بتایا کہ انہیں توقع ہے کہ وائرلیس دماغی چپ کا انسانی کلینیکل ٹرائل 6 ماہ میں شروع ہوجائے گا، کانفرنس کے دوران ایلن مسک نے ایک ویڈیو بھی دیکھائی جس میں دو  بندروں کو  کمپیوٹر کا  ماؤس استعمال کرتے دیکھایا گیا ، مسک کے مطابق چپ سے معذور افراد پھر حرکت اور بات کرنے کے قابل ہوجائیں گے۔

ایلون مسک نے خطاب کے دوران بتایا کہ دماغی چپ سے بینائی کو بحال کرنے کا ہدف بھی طے کیا گیا ہے، گزشتہ برسوں کے دوران نیورالنک کی جانب سے اس چپ کے تجربات جانوروں پر کیے گئے اور انسانوں پر کلینیکل ٹرائل کے لیے یو ایس فوڈ اینڈ ڈرگ ایڈمنسٹریشن کی منظوری حاصل کرنے کی کوشش کررہی ہے۔

ایلون مسک کے مطابق ہم بہت زیادہ احتیاط سے کام لیتے ہوئے انسانوں میں چپ نصب کرنے سے پہلے اس کے کارآمد ہونے کی تصدیق کرنا چاہتے ہیں ، ان کا کہنا تھا کہ اگرچہ انسانوں میں اس کے استعمال کے حوالے سے پیشرفت بہت سست رفتار ہے مگر ہم متوازی بنیادوں پر کافی کچھ کررہے ہیں۔

انہوں نے بتایا کہ اس ڈیوائس کا تجربہ سب سے پہلے 2 افراد پر کرتے ہوئے ان کی بینائی اور مسلز کی حرکت کو بحال کیا جائے گا، یہ ایونٹ پہلے 31 اکتوبر کو ہونا تھا مگر اسے کسی وجہ کے بغیر ملتوی کردیا گیا تھا، نیورالنک نے آخری بار 2021 میں اس ڈیوائس کے بارے میں پیشرفت جاری کی تھی جب ایک بندر میں اسے نصب کیا گیا جو اپنے خیالات سے ایک کمپیوٹر گیم کھیلنے کے قابل ہوگیا تھا۔

مزید :

اہم خبریں -قومی -