وہ  بد دعاؤں  کا  لہجہ  نہیں سمجھ  پایا ۔۔۔

وہ  بد دعاؤں  کا  لہجہ  نہیں سمجھ  پایا ۔۔۔
وہ  بد دعاؤں  کا  لہجہ  نہیں سمجھ  پایا ۔۔۔

  IOS Dailypakistan app Android Dailypakistan app

اڑا   قفس   سے  تو  پھر  لوٹ کر نہیں آیا 
کہاں   بہشت  ،   کہاں   زندگی    فرومایہ

ستارو!  تم  ہی   بتاؤ  کہ  رات  کیسے کٹے 
پیامبر   تو   ابھی   تک   خبر   نہیں   لایا 

ہوئی  جو  رات  تو  مہتاب  دیکھ کر روئے 
ہوا   چلی   تو   اسی  زلف  کا  خیال    آیا 

تمام  رات  سسکتے  رہے  ادھورے  خواب
نہ   نیند    آئی   نہ  وہ  پیکر    جمال   آیا 

خبرپڑھی ہےکہ فاقوں سےمرگیا وہ شخص 
تمام  شہر  میں  حاتم  ہے  جس کا  ہمسایہ

اب اس حویلی میں بےروح جسم رہتے ہیں 
وہ  بد دعاؤں  کا  لہجہ  نہیں سمجھ  پایا 

چل اے مسافر شب  خود چراغ  بن جائیں 
ہے  راستوں  میں اندھیرا  اگر  گھنا  چھایا

فقیہ و صوفی  و  شاعر  سگان  شاہ  تمام
میری  نظر  کو  فریب   نظر  نہ  راس   آیا

نہ مانگ مجھ سےعداوت کی تلخیاں بزمی 
کہ  بس  متاع  محبت  ہے  میرا    سرمایہ

کلام : سرفراز بزمی(    سوائی مادھوپور، راجستھان، بھارت )

مزید :

شاعری -