شب دسمبر تو ٹھنڈک  میں  ڈھلتی رہی۔۔۔

شب دسمبر تو ٹھنڈک  میں  ڈھلتی رہی۔۔۔
شب دسمبر تو ٹھنڈک  میں  ڈھلتی رہی۔۔۔

  IOS Dailypakistan app Android Dailypakistan app

شب دسمبر تو ٹھنڈک  میں  ڈھلتی رہی
آگ تھی اک جو سوچوں میں جلتی رہی

نارسائی    میں    ارماں     مچلتے    رہے
آرزو     آرزو     میں    ہی    پلتی    رہی

وہ   کبھی  شکل  پیکر   میں  آئی   نہیں 
جو   خیالوں  میں  میرے   سنورتی  رہی

اک  پری  جو   فلک  کی   بلندی  پہ   تھی
میری    پستی    کے    زینے    اترتی   رہی

چھو  کے  اس  کا   بدن   نرم  و نازک  ہوا
میری    ویراں   گلی    سے    گزرتی   رہی

ہجر    صورت   سدا   تھی  جو  میرے لئے 
سایہ   بن   کے  مرے   ساتھ   چلتی   رہی

میرے   اندر   تخیل  کی   مورت  تھی جو
خواب ہی خواب میں  وہ  بھی  ڈرتی رہی

ہر   قدم    پر     میں    رستہ    بدلتا    رہا
ہر   قدم  پر  وہ   مجھ  سے  الجھتی  رہی

ہاں   عبید   اس  کا   جوبن    سنورتا    رہا
وہ    گلابوں   کی   صورت   نکھرتی   رہی

کلام :عبید اللہ توحیدی (جنرل سیکرٹری: ادب قبیلہ وزیر آباد )

مزید :

شاعری -