جرمنی ، سیاسی جماعت کی مہاجرین کیخلاف ہتھیار استعمال کرنے کی تجویز

جرمنی ، سیاسی جماعت کی مہاجرین کیخلاف ہتھیار استعمال کرنے کی تجویز

برلن (آن لائن)جرمنی کی دائیں بازو کی عوامیت پسند سیاسی جماعت اے ایف ڈی کی خاتون سربراہ پَیٹری نے مطالبہ کیا ہے کہ مہاجرین کی آمد روکنے کے لیے آسٹرین جرمن سرحد کی نگرانی سخت کی جائے اور ضروری ہو تو پولیس آتشیں ہتھیار بھی استعمال کرے۔غیر ملکی خبر رساں ادارے کے مطابق رائٹ ونگ پاپولسٹ پارٹی ’آلٹرنیٹیو فار ڈوئچ لینڈ‘ یا ’جرمنی کے لیے متبادل‘ کی خاتون سربراہ فراؤکے پَیٹری نے یہ مطالبہ ’مان ہائمر مورگن‘ نامی ایک جرمن اخبار میں اپنے ایک انٹر ویو میں کیا۔یہ پارٹی جرمن زبان میں مختصراً اے ایف ڈی کہلاتی ہے۔ اس انٹرویو میں پیٹری نے کہا کہ برلن حکومت کو اس بات کو یقینی بنانا چاہیے کہ آسٹریا کے راستے دوبارہ بہت بڑی تعداد میں تارکین وطن جرمنی میں داخل نہ ہو سکیں۔ پَیٹری نے یہ متنازعہ مطالبہ بھی کر دیا کہ مزید مہاجرین کی آمد کو روکنے کے لیے ’ہنگامی حالات میں پولیس کو آتشیں اسلحہ بھی استعمال میں لانا چاہیے۔اس خاتون سیاستدان نے کہاکہ ’’کوئی بھی پولیس اہلکار کسی پناہ گزین پر فائرنگ نہیں کرنا چاہتا۔ میں بھی نہیں چاہتی کہ ایسا ہو۔ لیکن ہتھیاروں کا استعمال ایک ایسا راستہ ہے، جس کی آخری حل کے طور پر تردید نہیں کی جا سکتی۔ اس رہنما کے مطابق سب سے اہم بات یہ ہے کہ مزید تارکین وطن کی آمد کو روکنے کے لیے ہر ممکن اقدامات کیے جائیں۔ ’جرمنی کے لیے متبادل‘ نامی پارٹی کے مطابق اس مقصد کے لیے جرمنی اور آسٹریا کے مابین مذاکرات بھی ہونا چاہییں اور یورپی یونین کی بیرونی سرحدوں کی نگرانی بھی لازمی طور پر سخت تر کی جانا چاہیے۔گزشتہ برس ستمبر کے مہینے میں جرمنی نے آسٹریا کے ساتھ اپنی سرحد پر بارڈر کنٹرول کا عمل دوبارہ متعارف کرا دیا تھا۔

اس محدود عمل کی ابتدائی مدت میں جرمن وزیر داخلہ تھوماس ڈے میزیئر اب تک ایک زائد مرتبہ توسیع کر چکے ہیں۔ آخری مرتبہ یہ توسیع 13 نومبر کو کی گئی تھی، جس کی مدت 13 فروری کو ختم ہو رہی ہے۔حالیہ جائزوں کے مطابق اے ایف ڈی جرمنی کی تیسری بڑی سیاسی جماعت بن چکی ہے

مزید : عالمی منظر