آئیے مسکرائیں

آئیے مسکرائیں

  



٭ باپ بیٹے سے: اگر اس بار تم فیل ہوے تو مجھے اپنا باپ مت کہنا۔

اگلے دن باپ:کیا بنا رزلٹ کا؟

بیٹا: بس "بشیر صاحب" کچھ مت پوچھیں۔۔۔

٭ایک لڑکا (اپنے دوست سے): "یونیورسٹی میں میرا رزلٹ چیک کر کے بتانا۔ میرے ساتھ ابّو ہوں گے۔ اگر میں ایک پیپر میں فیل ہوں تو کہنا کہ مسلمان کی طرف سے سلام۔ اگر دو میں فیل ہوں تو کہنا کہ مسلمانوں کی طرف سے سلام۔"

دوست رزلٹ دیکھ کر آیا اور بولا: "پوری امتِ مسلمہ کی طرف سے سلام۔"

٭ایک آدمی نجومی کے پاس گیا اور بولا، "میری ہتھیلی میں کھجلی ہورہی ہے۔"

نجومی بولا، "تم کو جلد ہی دولت ملنے والی ہے۔"

آدمی بولا، "میرے پاؤں میں بھی کھجلی ہورہی ہے۔"

نجومی بولا، "تم سفر بھی کرو گے۔"

آدمی بولا، "میرے سر میں بھی کھجلی ہورہی ہے۔"

نجومی جھلا کر بولا، "چلو بھاگو یہاں سے، تمہیں تو خارش کی بیماری معلوم ہوتی ہے۔"

٭ایک دوست (دوسرے سے): یار! جب سے تمہارے گھر آیا ہوں یہ مکھیاں پیچھا ہی نہیں چھوڑتیں۔

دوسرا دوست: مکھیاں گندی چیزوں کو دیکھ کر ہی منڈلاتی ہیں۔

٭ایک دوست (دوسرے سے): جب سورج کی پہلی کرن مجھ پر پڑتی ہے میں اٹھ جاتا ہوں۔

دوسرا دوست: لیکن تمہاری امی کہتی ہیں کہ تم پورا دن سوتے رہتے ہو۔

پہلا دوست: ہاں دراصل میرے کمرے کی کھڑکی مغرب میں ہے۔

٭ایک دوست (دوسرے سے): میں نے نیا فلیٹ خرید لیا ہے اور کمرے کو بہترین طریقے سے سجایا ہے۔

دوسرا دوست: کیسے سجایا ہے؟

پہلا دوست: بالکل آفس کے انداز میں، تاکہ مجھے خوب گہری نیند آئے۔

٭استاد (لڑکے کے باپ سے): جناب! آپ کا بیٹا کلاس میں بہت کمزور ہے۔

باپ: اللہ کے فضل سے گھر میں دو بھینسیں ہیں۔ دودھ مکھن کی کوئی کمی نہیں۔ پھر بھی معلوم نہیں کیوں کمزور ہے۔

٭ایک دوست (دوسرے سے): میری بچپن میں خواہش تھی کہ میں دنیا کا سب سے بڑا جھوٹا بنوں۔

دوسرا دوست: پھر کیا ہوا؟

پہلا دوست: بس پھر کیا، میں وکیل بن گیا۔

٭برطانوی وزیر اعظم ایک عام جلسے میں تقریر کر رہے تھے۔ اچانک پنڈال سے باہر ایک گدھے نے رینکنا شروع کردیا۔ انہوں نے تقریر جاری رکھی۔ اس پر پیچھے سے آواز آئی، "ایک وقت میں ایک جناب۔"

٭ایک انگریز سیاح نے جو چینی زبان نہیں جانتا تھا، مینو کی آخری سطر پر انگلی رکھتے ہوئے بیرے سے کہا کہ وہ اس ڈش کی ایک پلیٹ لے آئے۔بیرے نے جو انگریزی جانتا تھا، مسکراتے ہوئے کہا، "معاف کیجیے جناب! آپ کے حکم کی تعمیل نہ ہو سکے گی، کیوں کہ یہ ہمارے ہوٹل کے مالک کا نام ہے۔"

٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭

ایک دن ملا نصرالدین رمضان میں کھانا کھا رہے تھے۔ ایک آدمی نے دیکھا تو پوچھا "آپ رمضان میں کھانا کھا رہے ہیں۔"

ملا نے جواب دیا، "آپ اس پلیٹ کو رمضان کہتے ہیں۔ میں تو اسے پلیٹ کہتا ہوں اور میں پلیٹ میں کھانا کھا رہا ہوں رمضان میں نہیں۔"

٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭

ایک صاحب قبرستان میں ایک قبر کے پاس کھڑے رو رو کر کہہ رہے تھے، "تم تو چلے گئے، مگر میری زندگی کو خزاں بنا گئے۔"

ایک راہ گیر نے ہمدردی میں ان سے پوچھا، "اس قبر میں آپ کا کوئی عزیز دوست یا رشتے دار دفن ہے؟"

ان صاحب نے جواب دیا، "جی نہیں، یہ میری بیوی کے پہلے شوہر کی قبر ہے۔"

٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭

باپ (بیٹے سے): کیا امتحان میں سوال آسان تھے؟

بیٹا: سوال تو آسان تھے، مگر جواب مشکل تھے۔

٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭

مالک (ملازم سے): تمہیں دفتر میں آئے ہوئے صرف ایک دن ہوا ہے اور تم نے تین کرسیاں توڑ ڈالیں۔

ملازم: جناب، آپ کے اشتہار میں لکھا تھا کہ آپ کو مضبوط آدمی چاہیے۔

٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭

مشہور سائنسداں آئن اسٹائن ایک مرتبہ بس میں سفر کر رہے تھے۔ انہوں نے اپنے ہینڈ بیگ سے کچھ ضروری کاغذات نکال کر پڑھنا چاہے تو خیال آیا کہ اپنا چشمہ تو گھر بھول آئے ہیں۔ مجبورا ساتھ بیٹھے ہوئے شخص سے کہا، "ازراہ کرم! ذرا یہ کاغذات پڑھ دیجیے۔"

اس شخص نے مسکراتے ہوئے کہا، "جناب! میں بھی آپ کی طرح جاہل ہوں۔"

٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭

ایک آدمی کچھ سامان لے کر سڑک پر بہت تیز دوڑ رہا تھا۔

ایک پولیس سارجنٹ نے اسے روک کر پوچھا، "بھائی! تم کہاں بھاگ رہے ہو؟"

اس آدمی نے کہا، "میں اپنی بیوی کے لیے چیزیں خرید کر لے جا رہا ہوں۔"

"مگر اس میں دوڑنے کی کیا بات ہے؟" سارجنٹ نے تعجب بھرے لہجے میں کہا۔

"میں بھاگ اس لیے رہا ہوں، کیوں کہ اگر میں دیر سے گھر پہنچا تو کہیں فیشن نہ بدل جائے اور مجھے واپس جانا پڑے۔"

٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭

ایک بڑی فیکٹری کا مالک جب اپنے اسٹور روم کے معائنے کے لیے گیا تو اس نے باہر ایک نوجوان کو دیکھا جو درخت کی چھاؤں تلے بیٹھا گنگنا رہا تھا۔ مالک نے اس سے پوچھا، "تم کیا کام کرتے ہو؟"

وہ بولا، "میں چپڑاسی ہوں۔"

مالک نے پوچھا، "تمہیں ہر ماہ کتنی تنخواہ ملتی ہے؟"

چپڑاسی نے جواب دیا، "چار سو روپے۔"

مالک نے اپنی پتلون کی جیب سے سو سو کے چار نوٹ نکالے اور انہیں چپڑاسی کے ہاتھ میں تھماتے ہوئے کہا، "نکل جاؤ میری فیکٹری سے! آئندہ پھر کبھی نہیں آنا۔"

جب چپڑاسی فیکٹری کے احاطے سے چلا گیا تو مالک نے مینیجر کو بلا کر پوچھا، "وہ کام چور چپڑاسی کتنے دن سے ہمارے ہاں ملازم تھا؟"

"سر! وہ ہمارا ملازم نہیں تھا۔ کسی اور فیکٹری سے خط لے کر آیا تھا اور جواب کا انتظار کر رہا تھا۔" ٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭

امیر باپ اپنے نالائق بیٹے سے: ااس بار اگر تم امتحان میں کامیاب ہو گئے تو میں تمہیں نئی کار لے کر دوں گا۔

سالانہ امتحان کا نتیجہ آیا تو پھر فیل۔

باپ (گرجتے ہوئے): سارا سال آخر کیا کرتے رہے؟

نالائق بیٹا: ابو! میں وہ گاڑی چلا نے کی پریکٹس کرتا رہا۔

--------------------------------------------------------------------------------------------------

اْستاد (ڈانٹے ہوئے): تم دونوں آج پھر لیٹ اسکول آئے ہو؟!

پہلا لڑکا: سر! وہ میرے پیسے کہیں گر گئے تھے، ان کو ڈھونڈ رہا تھا۔

اْستاد (دوسرے لڑکے سے): اور تْم؟

دوسرا لڑکا: سر! میں دراصل اس کے پیسوں پر پاؤں رکھ کر کھڑا تھا۔

-------------------------------------------------------------------------------------------------

مزید : ایڈیشن 1