احساس کفالت پروگرام کا آغاز، اب انقلاب آئیگا، غریب لوگوں کو گائے، بھینس مرغیاں اورانڈے، بچوں کو سکالر شپ دینگے: عمران خان

        احساس کفالت پروگرام کا آغاز، اب انقلاب آئیگا، غریب لوگوں کو گائے، ...

  



اسلام آباد(سٹاف رپورٹر، مانیٹرنگ ڈیسک،آئی این پی) وزیراعظم عمران خان نے احساس کفالت پروگرام کا افتتاح کرتے ہوئے کہاہے کہ اس پروگرام سے ملک میں انقلاب آئے گا اور خواتین گھر بیٹھے بااختیار ہوں گی،سب پروگرامز کا مقصد پاکستان کو فلاحی ریاست بنانا ہے ، ریاست مدینہ کے سنہری اصول ہمارے لئے لائق تقلید ہیں اور نئے پاکستان کا مقصد معاشرتی معاملات کو یقینی بنانا ہے، دنیا میں امیر ترین لوگ پاکستانی ہیں لیکن پاکستان خود پیچھے رہ گیا، ہم نے چھوٹے طبقے کو ملکی ترقی کی دوڑ میں شامل کرنا ہے، آئندہ 2 ہفتے میں احساس کا اگلا پروگرام آئے گا جس میں غریب لوگوں کو گائے اور بھینسیں دیں گے، غریب گھرانے کے بچوں کو اسکالرشپ دیں گے، جب کہ وہ نوجوان جو کاروباری اعتبار سے نئے اور بہترین آئیڈیاز لے کرآئیں گے انہیں قرض دیا جائے گا، نچلے طبقے کو اوپر کرنے والا ملک ہی آگے بڑھتا ہے، دنیا میں تیزی سے ترقی کرنے والی قوم چین کی ہے جہاں 30 سال میں 70 کروڑ عوام کو غربت سے نکالا گیا چھوٹے طبقے کو بڑھایا گیا اور آج چین ملک کے بہترین معیشت والا ملک ہے، بینظیر انکم سپورٹ پروگرام کا پیسہ چوری ہو رہا تھا جس سے مستحق عوام اپنے حق سے محروم رہے، ہماری حکومت کی سب سے بڑی کامیابی یہ ہے کہ ہم نے 70 لاکھ مستحق افراد کو ہیلتھ کارڈ تقسیم کئے، احساس کفالت پروگرام کا شدت سے انتظار تھا جس کے لئے پہلی مرتبہ 200 ارب روپے رکھے ہیں۔جمعہ کو احساس کفالت پروگرام کے باقاعدہ اجراء کی تقریب سے خطاب کرتے ہوئے وزیراعظم عمران خان نے کہا کہ آج دل سے چیئرپرسن احساس پروگرام ثانیہ نشتر کا شکریہ ادا کرتا ہوں کہ آپ نے بہت اہم کام کیا ہے اور آپ پر پریشر بھی بہت تھا، لوگوں کی جانب سے مسلسل تنقید ہو رہی تھی اور ملکی معیشت کے حالات بھی اچھے نہیں تھے۔ انہوں نے کہا کہ احساس کفالت پروگرام کیلئے حکومت نے 200ارب روپے رکھے اور جلد غریب میں تقسیم ہو، ثانیہ نشتر خراج تحسین کی مستحق ہیں کہ انہوں نے دیانتداری سے سسٹم بنایا اور آٹھ لاکھ جعلی لوگوں کو بھی نکالا ہے۔ وزیراعظم نے کہا کہ میں خود سے خیراتی پروگرام چلاتا ہوں اور جو کام اللہ کی رضا کیلئے ہو کامیاب ہوتی ہے۔حکومت کی کوشش ہے کہ غریبوں کا پیسہ ان تک پہنچانا لازمی تھا، وزیراعظم نے کہا کہ احساس کفالت پروگرام کے تحت خواتین کیلئے بینک اکاؤنٹ کھولنا اور کارڈز کا اجراء کرنا جس سے یوٹیلیٹی سٹورز سے رعایتی قیمت پر اشیاء ملیں گی، جبکہ خواتین کو سمارٹ فونز دینا بھی انتہائی اہم ہے، سمارٹ فونز نے دنیا میں انقلابی تبدیلیاں لائی ہیں اور ہر گاؤں اور قصبے میں خواتین کو سمارٹ فونز کے ذریعہ تعلیم دینا بھی آسان ہوگا، وزیراعظم عمران خان نے اپنے خطاب میں کہا کہ دو ہفتے میں احساس کا ایک اور پروگرام لا رہے ہیں جس میں غریب خواتین کو گائے اور بھینسیں دی جائیں گی جس سے ملک میں انقلاب آئے گا اور خواتین گھر بیٹھے بااختیار ہوں گی۔اس پروگرام کے تحت مرغیاں اور انڈے بھی دیے جائیں گے جبکہ تیسرے پروگرام میں سکالرشپس کا پروگرام لا رہے ہیں۔انہوں نے کہا کہ ان سب پروگرامز کا مقصد یہ ہے کہ پاکستان کو وہ ریاست بنانا ہے جو اس نے بنانا تھا۔ ملک کو فلاحی ریاست بنانا ہے جو اپنے عوام ذمہ داری ہے۔انہوں نے کہا کہ دنیا میں جب کوئی ملک اس وقت تک آگے نہیں بڑھ سکتا جب تھوڑے لوگ امیر ہوں اور نچلا طبقہ غریب رہ جائے جبکہ ریاست مدینہ کے سنہری اصول ہمارے لئے لائق تقلید ہیں اور نئے پاکستان کا مقصد معاشرتی معاملات کو یقینی بنانا ہے۔ پروگرام کے آغاز کی تقریب سے خطاب کرتے ہوئے چیئرپرسن احساس پروگرام ڈاکٹر ثانیہ نشتر نے کہا کہ احساس کفالت پروگرام کے تحت مستحق خواتین کو بیس ہزار روپے ماہانہ نقد وظائف دیئے جا ئینگے، بے نظیر انکم سپورٹ پروگرام کے اعدادوشمار دس سال پرانے تھے، موجودہ حکومت باقاعدہ سروے اورنادرا ڈیٹابیس سے مستحقین کا انتخاب کیا ہے، جبکہ دس سال قبل انکم سپورٹ پروگرام کیلئے 6بنکوں سے معاہدے کئے گئے ہیں اور پروگرام مستحقین کی رجسٹریشن کا عمل شروع کر دیا گیا ہے اور ڈیسک رجسٹریشن کا عمل تحصیل کی سطح پر شروع کیا گیا ہے۔ انہوں نے کہا کہ اضلاع میں رجسٹریشن کا عمل مکمل جبکہ 55میں مارچ تک مکمل کرلیا جائے گا اور احساس کفالت پروگرام کیلئے دو بنکوں کے ساتھ معاہدہ کیا گیا ہے، احساس کفالت پروگرام سو فیصد بائیو میٹرک ہے اور مستحق خواتین کے بینکوں تک رسائی کے عمل کو آسان بنایا گیا ہے۔ثانیہ نشتر نے کہا کہ کفالت پروگرام مستحق خواتین کی معاشی معاونت میں اہم کردار ادا کرے گا، پروگرام سے مستفید ہونے والی ہر خاتوں کا بنکوں میں بچت اکاؤنٹ ہوگا اور کفالت پروگرام کے تحت ہر خاتون کو سمارٹ فون ملے گا، کفالت پروگرام احساس پروگرام کا حصہ ہے اور کفالت پروگرام کا دائرہ کار شراکت داری سے آگے بڑھے گا۔ انہوں نے کہا کہ پروگرام کے یوٹیلٹی سٹورز اور سکولوں کی فیس کی مد میں رعایت ہوگی، کفالت پروگرام سے 7لاکھ گھرانے مستفید ہوں گے اور دس لاکھ خواتین کو پاکستان پوسٹ کے ذریعے کارڈ کا اجراء شروع کردیا گیا ہے۔دریں اثنا وزیراعظم عمران خان نے کہا ہے کہ کرپٹ افراد ملک لو ٹیں گے تو پکڑ ئے جا ئیں گے احتساب ، شفافیت اور ریفارمز سب سے بڑی ترجیح ہے ادارے اتنے مضبوط کر دوں گا جتنے پہلے نہیں تھے،احتساب کے ساتھ ساتھ عوامی فلاح و بہبود حکومت کی ترجیح ہے۔جمعہ کے روز وزیراعظم عمران خان سے سابق وزیر قانون بابر اعوان نے ملاقات کی جس میں بابر اعوان نے وزیراعظم کو مختلف آئینی، قانونی اور سیاسی امور پر بریفنگ دی۔اس موقع پر وزیراعظم عمران خان نے کہا کہ اداروں کا نام ریاست بھی ہے اور جمہوریت بھی ہے، احتساب، شفافیت اور اصلاحات سب سے بڑی ترجیحات ہیں، بڑے کرپٹ لوگ ملک لوٹیں گے تو پکڑے بھی جائیں گے۔وزیراعظم کا کہنا تھا کہ احتساب کے ساتھ ساتھ عوامی فلاح و بہبود حکومت کی ترجیح ہے، احساس پروگرام کے تحت نچلے طبقے کو اوپر اٹھائیں گے۔ بابراعوان نے کہا کہ احتساب اور ریفارمز کا ایجنڈا حکومت کی درست سمت کا تعین ہے، حالات میں بہتری کے ثمرات جلد عام عوام تک پہنچ سکیں گے۔بعد ازاں وزیر اعظم عمران خان سے پشاور زلمی کے چیئرمین جاوید آفریدی نے بھی ملاقات کی، قومی کھیل پالیسی اوردیگر امور پر تبادلہ خیال کیاگیا۔جاوید آفریدی نے وزیر اعظم کو بتایا کہ جنوبی افریقی بیٹسمین ہاشم آملہ بھی پشاور زلمی سے منسلک ہوگئے ہیں جس پر وزیراعظم عمران خان نے خوشی کااظہارکیااور کہا پاکستان سپر لیگ کے پانچویں سیزن کا پاکستان میں انعقاد ملک کیلئے ایک تاریخی لمحہ ہوگا

عمران خان

اسلام آباد(سٹاف رپورٹر) وزیراعظم عمران خان سے وزیراعلیٰ خیبرپختونخوا محمود خان نے ملاقات کی۔ وزیراعظم عمران خان سے محمود خان نے اسلام آباد میں ملاقات کی جس میں صوبے کے سیاسی اور حکومتی امور پر تبادلہ خیال کیا گیا۔وزیر اعلیٰ نے وزیراعظم کو قبائلی اضلاع میں ترقیاتی منصوبوں سے متعلق بھی آگاہ کیا اور صوبائی کابینہ کی کارکردگی کے حوالے سے بھی بات چیت ہوئی۔ نجی ٹی وی کے مطابق وزیر اعظم اور وزیر اعلی خیبر پختونخوا کی ملاقات کی اندرونی کہانی سامنے آئی جس کے مطابق ملاقات میں وزیراعظم نے وزیراعلی ٰسے کہا کہ برطرف وزرا ء کو ایک موقع ضرور دیں، آپ پر کسی قسم کا کوئی دبا ؤنہیں ڈالنا چاہتا مگر میں سمجھتا ہوں آپ لوگوں کے درمیان غلط فہمی ہوئی ہے، تینوں برطرف وزرا کو کابینہ میں شامل کرکے ایک بار پھر اپنی ٹیم کو مضبوط کریں۔ذرائع کے مطابق وزیر اعظم عمران خان نے وزیر اعلی خیبر پختونخوا محمود خان پر مکمل اعتماد کا اظہار کرتے ہوئے کہا آپ کو بااختیار رکھنے کے لیے ہی وزرا کو برطرف کرنے کی منظوری دی تھی۔ذرائع کا کہنا ہے کہ وزیراعظم نے کہا کہ برطرف وزرا کو سمجھایا ہے کہ وزیراعلی میرا نمائندہ ہے اور انہیں یہ بھی واضح طور پر بتا دیا ہے کہ آپ کو چیلنج کرنا مجھے چیلنج کرنا ہے۔ دوسری جانب ترجمان خیبرپختونخواہ حکومت اجمل وزیر نے کہا ہے کہ وزیراعلی کی وزیراعظم سے ہفتہ وار ملاقات ہوئی ہے۔ وزیراعلی نے وزیر اعظم کو صوبائی حکومت کی کارکردگی پر بریفنگ دی۔ وزیراعظم کو صوبے میں ترقیاتی منصوبوں سے اگاہ کیا گیا۔اجمل وزیر نے بتایا کہ کہ وزیراعلی خیبرپختونخواہ نے قبائلی اضلاع میں جاری ترقیاتی منصوبوں پر بھی بریفنگ دی۔ جبکہ وزیراعظم نے صوبائی حکومت کی کارکردگی پر اطمینان کا اظہار کیا۔ترجمان صوبائی حکومت اجمل وزیر نے کہا کہ وزیراعظم نے مہنگائی میں کمی کیلئے کیے گئے اقدامات کو بھی سراہا۔ وزیراعظم نے مہنگائی کے خاتمے کیلئے مزید اقدامات کی بھی ہدایت کی۔اجمل وزیر کے مطابق وزیراعظم نے غریب شہریوں کو زیادہ سے زیادہ سہولیات دینے کی ہدایت کرتے ہوئے کہا کہ صوبائی حکومت غریبوں کا خاص خیال رکھے۔ عوام کے مسائل ترجیحی بنیادوں پر حل کرنے کیلئے مزید اقدامات کریں۔

وزیر اعلیٰ ملاقات

مزید : صفحہ اول