ایران کا سی پیک کا حصہ بننے کی خواہش کا اظہار، پاکستان کیساتھ تمام شعبوں میں تعلقات کو مضبوط بنانا چاہتے ہیں: سید محمد علی حسینیی

ایران کا سی پیک کا حصہ بننے کی خواہش کا اظہار، پاکستان کیساتھ تمام شعبوں میں ...

  



اسلام آباد(سٹاف رپورٹر) ایرانی سفیر سید محمد علی حسینی نے سی پیک کا حصہ بننے کی خواہش کا اظہارکردیا، پاکستان کیساتھ تمام شعبوں خصوصا تجارت میں تعلقات کو مضبوط بنانا چاہتے ہیں۔ تفصیلات کے مطابق اسلام آباد پالیسی انسٹی ٹیوٹ میں ایرانی سفیر نے گزشتہ روز ایران کی سی پیک میں شمولیت کی خواہش کا اظہار کیاہے۔ایرانی سفیر نے پاکستان سے امریکی پابندیوں میں خامیاں تلاش کرنے اور دونوں ممالک کے مابین دوطرفہ تجارت بڑھانے پر زوردیا۔پالیسی انسٹی ٹیوٹ میں ایرانی سفیر سید محمد علی حسینی نے بھی ”پاک ایران امن اور سلامتی تعاون“ کے موضوع پر لیکچر دیا۔ایران نے اس سے قبل چین پاکستان اقتصادی راہداری میں دلچسپی ظاہر کی تھی۔ ایرانی سفیر نے اس بات پر زور دیا کہ ایران پاکستان کے ساتھ تمام شعبوں خصوصا تجارت میں تعلقات کو مضبوط بنانا چاہتا ہے۔سفیر نے اعتراف کیا کہ بڑے معاشی محاذوں خصوصا سی پیک پر پیشرفت روکنے والے عوامل امریکی پابندیوں کی وجہ سے ہیں۔ایرانی سفیر نے مشرق وسطی میں درپیش امور افغانستان میں امن، دو طرفہ ایجنڈے اور شام میں عسکریت پسند اسلامک سٹیٹ گروپ یا داعش کے خلاف جنگ میں بعض پاکستانیوں کی شرکت پر تبادلہ خیال کیا۔ پاکستان اور ایران نے اس سے قبل دو طرفہ تجارت میں 5 ارب ڈالر سالانہ، تجارت اور خدمات کو سہولیات فراہم کرنے کے لئے اوپن بینکنگ چینلز میں اضافے پر اتفاق کیا تھا۔تاہم، ایران پر امریکی پابندیوں کی وجہ سے اس سمت میں بہت کم پیشرفت ہوئی ہے۔ پاکستان طویل عرصے سے ایران پاکستان گیس پائپ لائن کو متحرک نہیں کرسکا ہے۔ اسی طرح ایران نے بھی یورپی یونین کے ساتھ پابندیوں کو نظرانداز کرنے کے لئے ایک مالی طریقہ کار تیار کیا تھا، لیکن یہ ناکام رہاتھا۔ مندوب نے پاکستان کو مبارکباد پیش کی جب ان کے تعلقات کی بات کی جائے تو وہ دباؤ میں نہیں آئے۔ ان کا کہنا تھا کہ دونوں ممالک کے مابین سرحدی تعاون میں اضافہ ہوا ہے، اور وزیر اعظم عمران خان کی کوششوں سے سرحدی صورتحال بہتر ہوئی ہے۔

ایران/خواہش

مزید : صفحہ اول