شاہد خاقان عباسی ضمانت کی درخواست دائر کرنے کیلئے رضامند

شاہد خاقان عباسی ضمانت کی درخواست دائر کرنے کیلئے رضامند

  



اسلام آباد(مانیٹرنگ ڈیسک) مسلم لیگ(ن) کے رکن قومی اسمبلی وسابق وزیراعظم شاہد خاقان عباسی ضمانت کی درخواست دائر کرنے کیلئے رضا مند ہوگئے، نواز شریف نے شاہد خاقان عباسی کو قائل کیا۔ذرائع کے مطابق سابق وزیراعظم شاہد خاقان عباسی کی درخواست ضمانت آئندہ ہفتے تک دائر کئے جانے کا امکان ہے، بیرسٹر ظفراللہ نے شاہد خاقان عباسی کی درخواست ضمانت کی تیاری شروع کر دی۔

شاہد خاقان/رضامند

اسلام آباد (سٹاف رپورٹر) مسلم لیگ (ن) کے رکن قومی اسمبلی و سابق وزیراعظم شاہد خاقان عباسی نے نیب کو دہشت گرد ادارہ قرار دے کر ختم کرنے کا مطالبہ کرتے ہوئے کہا ہے کہ نیب پولیٹیکل انجینئرنگ کا کارخانہ ہے جوملک کو تباہ کررہا ہے۔ ایک نجی ٹی وی کو گزشتہ روز انٹرویو دیتے ہوئے شاہد خاقان عباسی نے پارٹی سے اختلافات کی خبروں کی بھی تردید کردی اور کہاکہ ن لیگ سے میرے کوئی اختلافات نہیں۔انہوں نے کہا کہ ہر شخص کی تضحیک کرنا نیب کا شیوہ ہے۔ انہوں نے کہا کہ میں ملک کا سابق وزیر اعظم ہوں مجھ سے تحقیقات کو ڈیڑھ سال ہو گیا ہے لیکن ثبوت نہ ہونے کی بنیاد پر نیب میرے اوپر کوئی مقدمہ نہیں بنا سکا۔ انہوں نے کہا کہ یہ بات یہیں ختم نہیں ہو گی میں چیئرمین نیب،کیس افسروں اور آئی اوز سے پوچھوں گا کہ وہ کیا کر رہے ہیں۔ انہوں نے کہا کہ ہم نیب کی گزشتہ 20سالہ تاریخ کو دیکھیں تو صرف یہ سیاسی انجینئرنگ کا کارخانہ نظر آتا ہے۔ دو چیف جسٹس نیب کے بارے میں کیا کہہ چکے ہیں وہ کیا وہ نہیں جانتے تھے۔انہوں نے کہا کہ اس ادارے کو ختم کیا جائے اور اس میں بیٹھے چوروں کو گھر بھیجا جائے۔ شاہد خاقان عباسی نے کہا کہ ملک میں چھ سٹیک ہولڈرز ملکی پالیسی پر اثر انداز ہوتے ہیں اور آپ جب تک ان کو ایک ٹیبل پر نہیں بیٹھائیں گے تب تک ملک نہیں چلے گا اب ملک نہیں چل رہا اور جب تک ملکی معاملات چلانے کا طریقہ کار طے نہیں ہوگا تو ملک کو چلانا مشکل ہوگا۔ انہوں نے کہا کہ ملک کے جام ہونے سے پاکستان کے عوام مایوس ہو چکے ہیں وہ تکلیف میں ہیں جس ملک میں 70 روپے کا آٹا اور 90 روپے کی فی کلو چینی ہو تو یہ بہت خطرناک صورتحال ہے کوئی معمولی بات نہیں۔ سابق وزیر اعظم نے حکمرانوں کو مخاطب کرتے ہوئے کہا کہ اگر آپ نے کرپشن پکڑنی ہے تو سنجیدہ اقدامات کریں آپ بتائیں کہ اب تک آپ نے کتنی کرپشن پکڑ لی ہم تو ڈیڑھ سال سے تحقیقات کو بھگت رہے ہیں اور پھر بھی تعاون کے لئے تیار ہیں۔ انہوں نے ایک سوال پر وزیر اعظم کے معاون خصوصی براتے احتساب و داخلہ شہزاد اکبر کو دو نمبر آدمی قراردیتے ہوئے کہا کہ وہ پہلے اپنے اثاثے تو ظاہر کریں کہ انہوں نے اتنے اثاثے کہاں سے بنائے ہیں اور ابھی یہ کہاں پیسے بنا رہا ہے اور یہ سب حقائق آپ کے سامنے آئینگے۔ انہوں نے کہا کہ ان کو کسی کے خلاف میڈیا میں آکر تضحیک آمیز باتیں کرنے کا کوئی حق نہیں۔ انہوں نے کہا کہ شہزاد اکبر نے اگر بات کرنی ہے تو وہ ثبوت لے کر آئے۔۔ انہوں نے کہا کہ وہ چینی و آٹا بحران کا ذمہ دار حکومت کو سمجھتے ہیں۔ انہوں نے کہا کہ اس کی سب سے بڑی وجہ حکومت کی اپنی کرپشن ہے۔ انہوں نے کہا کہ وفاقی حکومت بھی ناکام ہوئی ہے اور صوبائی حکومت بھی۔ انہوں نے کہاکہ پی ٹی آئی میں دھڑا بندیوں کی بڑی وجہ مختلف جگہوں سے لوگوں کو توڑ کر لانا ہے جب آپ اسمبلیوں میں ایسے لوگوں کو لائیں گے تو اس کا انجام بھی یہی ہو گا۔ انہوں نے کہا کہ پی ٹی آئی میں ادھر ادھر سے سب مفاد پرست اکٹھے ہوئے ہیں اور جب مفاد پرستوں کا مفاد پورا نہیں ہو گا تو پھر انجام یہی ہو گا جس طرح پی ٹی آئی میں ہو رہا ہے۔

شاہد خاقان/انٹرویو

مزید : صفحہ اول