حکم امتناعی کے باوجود بیسمنٹ مارکیٹ میں تبدیل

حکم امتناعی کے باوجود بیسمنٹ مارکیٹ میں تبدیل

  



کراچی (نمائندہ خصوصی) عدالتی حکم امتناعی کے باوجود پانچ منزلہ شہباز بلڈنگ کی بیسمنٹ میں قائم پارکنگ شوز مارکیٹ میں تبدیل، علاقہ پولیس اور سندھ بلڈنگ کنٹرول اتھارٹی شکایت کے باوجود خاموش تماشائی کا کردار ادا کرتی رہی ہے، مارکیٹ کے افتتاح پر ہوائی فائرنگ اور مٹھائیوں کی تقسیم، رہائشی خوف و ہراس میں مبتلا ہوگئے، تفصیلات کے مطابق صدر ٹاون میں واقع پلاٹ نمبرW.05/21، وڈومل اودھارام کوارٹرز پر قائم شہباز پلازہ جو کہ 1982میں تعمیر ہوا، 27دسمبر2019 کو ایک مقامی شوز کمپنی کے مالک نے پلازہ کی بیسمنٹ میں قائم پارکنگ لنڈہ بازار کے دکانداروں کو مارکیٹ بنانے کیلئے فروخت کردی۔ دکانداروں نے بیسمنٹ کو مزید گہرا کرنے کے لیے کھدائی کا آغاز کیا، اس حوالے سے بذریعہ بلڈنگ کنٹرول اتھارٹی سے کوئی اجازت نہیں لی گئی، مکینوں نے علاقہ تھانہ رسالہ کو 32بار 15 کے ذریعے شکایت کی کہ ان کی پارکنگ پر قبضہ کرکے مارکیٹ بنائی جارہی ہے، پولیس نے کوئی کاروائی نہیں کی، ایک ماہ کے دوران مختلف محکموں کو درخواستیں دی گئیں آخر کار عدالت سے رجوع کیا گیا، سینئر سول جج ساؤتھ نے حکم امتناعی جاری کیا، لیکن کام جاری رہا، بالاخر 28جنوری کو مارکیٹ کا افتتاح کردیا گیا۔ سندھ کنٹرول اتھارٹی کے افسران نے موقف اختیار کیا کہ عدالت نے چونکہ حکم امتناعی جاری کیا ہے، اس وجہ سے ہم کوئی کاروائی نہیں کرسکتے، پولیس کا کہنا ہے کہ یہ کام بلڈنگ کنٹرول یا پھر اینٹی انکروچمنٹ سیل کا ہے، جبکہ نقشے کے بغیر مارکیٹ کا بن جانا اوردوران حکم امتناعی کام جاری رکھنا عدالتی احکامات کی سریحاً توہین کے زمرے میں آتا ہے، تاہم دکانداروں کا کہنا ہے کہ اس حوالے سے انہوں نے تمام قانونی ضابطے مکمل کرلیے ہیں۔

مزید : راولپنڈی صفحہ آخر