” چین میں موجود پاکستانی شہریوں کو واپس لائے تو پھر کروناوائرس۔۔“ وزیراعظم عمران خان کے معاون ظفر مرزا نے خبردار کر دیا

” چین میں موجود پاکستانی شہریوں کو واپس لائے تو پھر کروناوائرس۔۔“ وزیراعظم ...
” چین میں موجود پاکستانی شہریوں کو واپس لائے تو پھر کروناوائرس۔۔“ وزیراعظم عمران خان کے معاون ظفر مرزا نے خبردار کر دیا

  



اسلام آباد (ڈیلی پاکستان آن لائن )وزیراعظم عمران خان کے معاون خصوصی برائے صحت ظفر مرزا نے کہا ہے کہ عالمی ادارہ صحت نے خبردار کیا ہے کہ چین میں موجود پاکستانی شہریوں کو وطن واپس لائے تو کورونا وائرس کے پھیلاو¿ پر قابو ممکن نہیں رہے گا۔

نجی ٹی وی جیونیوز کی رپورٹ کے مطابق اسلام آباد میں قومی اسمبلی کی قائمہ کمیٹی برائے صحت کے اجلاس میں کورونا وائرس کے حوالے سے معاون خصوصی برائے صحت ظفر مرزا نے بتایا کہ ہمارے پاس بیماریوں سے بچنے سے متعلق کوئی بھی سہولت نہیں، پاکستانی طلبہ کی صحت اور دیگر سہولیات کے حوالے سے مسلسل حکومتِ چین سے رابطے میں ہیں۔انہوں نے کہا کہ کورونا وائرس سے چین میں متاثرہ چاروں پاکستانیوں کی حالت میں بہتری آ رہی ہے، چین کی حکومت پاکستانی طلبہ کو مکمل تحفظ اور بہتر سہولیات فراہم کر رہی ہے۔

ان کا کہنا ہے کہ چین کی فلائٹس 3 فروری سے دوبارہ شروع ہو جائیں گی، اس کے لیے تمام ائیرپورٹس اور ہسپتالوں میں مو¿ثر چیک اپ کے انتظامات کر رہے ہیں، مشتبہ مسافروں کو مزید چیک اپ کے لیے نگہداشت میں رکھا جائے گا۔ ڈاکٹر ظفر مرزا نے بتایا کہ قومی ادارہ صحت کے لیے پرائمر کٹ فلائٹ منسوخی کے سبب نہیں پہنچ سکی، پرائمر کی حوالگی سے پاکستان میں ہی کورونا کی تشخیص ممکن ہو جائے گی۔

کورونا وائرس سے سب سے زیادہ متاثرہ شہر ووہان میں 500 سے زائد پاکستانی طلبہ موجود ہیں جن میں سے 4 میں اِس وائرس کی تصدیق ہوئی ہے جبکہ کئی طلبہ نے حکومت سے انہیں ووہان سے نکالنے کی اپیل کی ہے تاہم حکومت کی جانب سے طلبہ کو چین سے نہ نکالنے کا فیصلہ کیا گیا ہے۔ اس سلسلے میں سینیٹ میں اپوزیشن نے بھی حکومت سے چین میں پھنسے پاکستانیوں کو وطن واپس لانے کا مطالبہ کیا ہے۔

مزید : قومی