پیٹرولیم منصوعات پر 5فیصد اضافی ٹیکس کاروبار ،عوامی مفاد کے منافی ہے: مزمل صابری

پیٹرولیم منصوعات پر 5فیصد اضافی ٹیکس کاروبار ،عوامی مفاد کے منافی ہے: مزمل ...

  

اسلام آباد (این این آئی) تاجر برادری نے اسلام آباد چیمبر آف کامرس اینڈ انڈسٹری میں منعقدہ ایک اجلاس میں پیٹرولیم منصوعات پر 5فیصد اضافی سیلز ٹیکس کے نفاذ کی شدید مخالفت کرتے ہوئے حکومت سے مطالبہ کیا ہے کہ وہ مذکورہ ٹیکس کو فوری واپس لے کیونکہ اس کے نفاذ سے کاروباری سرگرمیاں متاثر ہوں گی اور عوام کی مشکلات میں مزید اضافہ ہو گا۔ اجلاس سے خطاب کرتے ہوئے اسلام آباد چیمبر آف کامرس اینڈ انڈسٹری کے صدر مزمل حسین صابری نے کہا کہ عالمی مارکیٹ میں تیل کی قیمت میں 48فیصد سے زیادہ کی کمی واقع ہو چکی ہے جو کم ہو کر اب 57.90ڈالر فی بیرل تک آ گیا ہے اور تاجر برادری سمیت عوام یہ توقع کر رہے تھے کہ حکومت پیٹرولیم مصنوعات کی گرتی ہوئی قیمتوں کا پورا فائدہ عوام کو منتقل کرے گی لیکن حکومت نے پیٹرولیم منصوعات پر ٹیکس مزید بڑھا کر سب کو اس فائدے سے محروم کر دیا ہے۔ انہوں نے کہا کہ مذکورہ ٹیکس میں اضافے سے کاروبار کیلئے ٹرانسپورٹ کی لاگت بڑھے گی جبکہ عوام کیلئے مہنگائی میں اضافہ ہو گا۔

 انہوں نے کہا کہ پاکستان میں پہلے ہی 17فیصد جی ایس ٹی دنیا میں بہت زیادہ ہے جبکہ ایشیاءمیں اوسط جی ایس ٹی تقریبا 12فیصد ہے۔ ان حالات میں حکومت کو چاہیے تھا کہ وہ جی ایس ٹی میں مناسب کمی کر کے اس کو سنگل ڈیجٹ تک لاتی لیکن ایسا کرنے کی بجائے حکومت نے پیٹرولیم مصنوعات پر ٹیکس بڑھا کر 22فیصد کر دیا ہے جس کی دنیا میں کوئی مثال نہیں ملتی۔انہوں نے خدشہ ظاہر کیا کہ عالمی مارکیٹ میں تیل کی قیمت بڑھنے کی صورت میں پاکستان میں پیٹرولیم مصنوعات پر زیادہ ٹیکسوں کا بوجھ ناقابل برداشت ہو جائے گا۔ مزمل صابری نے کہا کہ معیشت کی موجودہ کمزور صورتحال اس بات کا تقاضا کرتی ہے کہ حکومت تجارتی و صنعتی سرگرمیوں کو بہتر طور پر فروغ دینے کیلئے نجی شعبے کو ہر ممکن تعاون و سہولت فراہم کرے لیکن کاروبار کیلئے سازگار حالات پیدا کرنے کی بجائے حکومت ایسے فیصلے کر رہی ہے جس سے کاروبار کی لاگت مزید بڑھے گی اور معیشت سست روی کا شکار ہو گی۔انہوں نے حکومت کی طرف سے گیس کی قیمت میں 30فیصد اضافے کی تجویز کو بھی مسترد کرتے ہوئے مطالبہ کیا کہ حکومت گیس کی قیمت میں مزید اضافہ کرنے سے باز رہے ورنہ اس سے صنعتی شعبہ ، جو پہلے ہی بجلی کی قلت کی وجہ سے شدید مشکلات کا شکار ہے، مزید مسائل میں مبتلا ہو جائے گا اور ؓبےروزگاری میں اضافہ ہونے کے ساتھ ساتھ ملکی برآمدات کو بھی نقصان پہنچے گا۔ انہوں نے کہا کہ پیٹرولیم مصنوعات پر مزید ٹیکس لگانے کی بجائے ملک کی آمدن کو بہتر کرنے کیلئے حکومت کے پاس کئی دوسرے بہتر آپشنز موجودہیں ۔آئی سی سی آئی کے صدر نے اس بات پر زور دیا کہ حکومت فوری طور پر تمام ٹیکس مراعات ختم کرے، ٹیکس ادا کرنے کی صلاحیت رکھنے کے باوجود ٹیکس سے مستثنیٰ تمام شعبوں کو ٹیکس کے دائرے میں لائے اور ایک منصفانہ ٹیکس نظام کو تشکیل دینے پر توجہ دے جو کاروباری سرگرمیوں کا گلا گھونٹنے کی بجائے معاشی سرگرمیوں کو فروغ دینے میں مثبت کردار ادا کرے۔

مزید :

کامرس -