سول ججز کم جوڈیشل مجسٹریٹ کےلئے عمر کی بالائی حد میں رعایت دی جائے، ہائیکورٹ بار

سول ججز کم جوڈیشل مجسٹریٹ کےلئے عمر کی بالائی حد میں رعایت دی جائے، ہائیکورٹ ...

  

لاہور (نامہ نگار خصوصی) لاہور ہائیکورٹ بار نے مطالبہ کیا ہے کہ سول ججز کم جوڈیشل مجسٹریٹ کے لئے عمر کی بالائی حد میں گورنمنٹ آف پنجاب کے نوٹیفکیشن کے مطابق رعایت دی جائے اور حاضر سروس ججز کو بار کے کوٹہ میں لا کر وکلاءکو ان کی حقوق سے محروم نہ کیا جائے جبکہ ایڈیشنل ڈسٹرکٹ اینڈ سیشن ججز کے امیدواروں کے لئے امتحانی سلیبس کم کیا جائے۔ یہ مطالبہ گزشتہ روز ہائی کورٹ بار ایسوسی ایشن کے اجلاس عام میں 4وکلاءکی طرف سے پیش کی جانے والی قرار دادیں منظور کرکے کیا گیا ۔اجلاس کی صدارت ہائی کورٹ بار ایسوسی ایشن کے قائم مقام صدر عامر جلیل صدیقی نے کی ۔اجلاس میں لاہورکے علاوہ وکلاءکی کثیر تعداد نے شرکت کی۔اجلاس سے خطاب کرتے ہوئے قائم مقام صدر عامر جلیل صدیقی نے کہا کہ بار عہدیداران نے لاہور ہائیکورٹ کی انڈمنسٹریشن کمیٹی سے وکلاءصاحبان کی پیش کردہ قراردادوں کے حوالہ سے بات کی تاکہ معاملہ افہام و تفہیم سے حل ہو جائے لیکن مسئلہ حل نہ ہو سکا۔ انہوں نے کہا کہ جوڈیشری کے حقوق کیلئے ملک بھر کے وکلاءنے اپنے اور بچوں کے پیٹ پر پتھر باندھ کر 3سال جدوجہد کی لیکن جب کبھی وکلاءکو کوئی مسئلہ درپیش ہوتو عدلیہ کو بھی خصوصی توجہ دینی چاہیے۔انہوں نے ہاﺅس کو بتایا کہ لاہور ہائیکورٹ بار ایسوسی ایشن ہر حال میں وکلاءکے شانہ بشانہ کھڑی ہو گی۔ اجلاس سے ہائی کورٹ بار کے سیکرٹری میاں محمد احمد چھچھر اورمشتاق موہل ایڈووکیٹ نے خطاب کرتے ہوئے کہا کہ وکلاءاور سول ججز کے لئے پہلے سے مختص کوٹہ بحال رکھا جائے اور عمر کی حد میں پنجاب حکومت کے نوٹیفکیشن کے مطابق رعایت دی جائے۔ سیکرٹری لاہور ہائیکورٹ بار ایسوسی ایشن نے قراردادیں رائے شماری کیلئے ہاﺅس کے سامنے پیش کی جسے متفقہ طور پر منظور کر لیا گیا۔

ہائیکورٹ بار

مزید :

صفحہ آخر -