پیپلز پارٹی نے 4 201 کے حوالے سے سیاسی اورمعاشی حقائق نامہ جاری کر دیا

پیپلز پارٹی نے 4 201 کے حوالے سے سیاسی اورمعاشی حقائق نامہ جاری کر دیا

  

لاہور (نمائندہ خصوصی) پیپلز پارٹی نے سال4 201 پر موجودہ حکومتی ، سیاسی ،معاشی اور امن و امان کی صورت حال پر حقائق نامہ جاری کر دیا۔پاکستان پیپلز پارٹی کے رہنماﺅں نے کہا ہے کہ حکمران شو بازیاں کر کے عوام کو بیوقوف بنا نے کی کوشش کر رے ہیں سال 2014 کو اگر حکومتی ناکامیوں، جلسوں، دھرنوں اور بدامنی کا سال قرار دیا جائے تو غلط نہ ہو گا یہ بات پیپلز لیبر بیورو مینارٹی ونگز پنجاب عبدالقادر شاہین نے پیپلز لیبر بیور پنجاب کے سیکرٹری اطلاعات محمد سلیم مغل کے ہمراہ پارٹی کے میڈیا آفس سے جاری حقائق نامہ کی پہلی قسط میں کہی کہ مسلم لیگ (ن) کو موجودہ حکومت کے سال 2014میں سیاسی معاشی اور امن و امان کی ابتر نا قص صورتحال پر گہری تشویش کا اظہار کرتے ہوئے کہا کہ رواں مالی سال کے دورا ن حکومت نے بینکوں سے 10907 ارب روپے کے ریکارڈ قرضے حاصل کیا 2014بلدیاتی انتخابات ہوئے نہ حلقہ بندیاں خصوصی کمیٹیاں بھی ناکام ضلعی حکومتوں، تحصیل، ٹاوئنز کے اختیارات بھی محدود لوکل اداروں کے اختیارات سلپ کر کے بنائی گئی اتھارٹیز، کمپینوں پر محکمہ بلدیات کی گرفت کمزور، ٹی ایم ایز اروبوں کی سالانہ آمدن سے محروم، حلقہ بندیاں کے حوالے سے قانون سازی تک مکمل نہ کی جا سکی، اس سال 2014 میں ملک بھر میں 3328 تبادلے و تقررہوئے جبکہ بعض افسران کے تبادلے 5 اور 6 بار بھی منسوخ کیے گئے سیاسی سفارش نہ رکھنے افسران کو کھڈے لائن لگا دیا گیا اور کسی اہم آسامی پر تعینات نہ کیا رواں برس پنجاب میں 1087، سندھ میں 884، خیبر پختونخوا711 اور بلوچستان 358 جبکہ وفاق میں288 تبادلے و تقرر کے احکامات جاری ہوئے چند افسران کے سوا کوئی بھی ایک سیٹر پر 3 سالہ مدت پوری نہ کر سکا، پنجاب میں جو اعلیٰ افسر تبدیل ہوئے ان میں 37 سیکرٹری عہدہ کے جبکہ 18 ڈی سی اور ز اور 8کمشنر سمیت دیگر افسران شامل ہیں انہیں ٹی اے ڈی اے کی مد میں 16 کروڑ 19 لاکھ رپوے سے زائد کی ادائیگی ہوئی اسی طرح سندھ میں 9 کروڑ، خیبر پختونخوا 6 کروڑ بلوچستان ایک کروڑ 9 لاکھ اور وفاق میں 4 کروڑ 27 لاکھ روپے بطور ٹی اے ڈی اے ادا کیے گئے ۔سانحہ ماڈل ٹاﺅن کا وزیرا عظم نواز شریف وزیر اعلیٰ پنجاب شہباز شریف، وفاقی وزراءاور پولیس افسران سمیت اہم شخصیات کے خلاف تھانہ فیصل ٹاﺅن میں مقدمہ درج ہوا ۔اسی طرح صحافیوں کی عالمی تنظیم انٹرنیشنل آف جرنلسٹس نے پاکستان کو صحافیوں کے لیے دنیا کا خطرناک ترین ملک قرار دیتے ہوئے کہا ہے کہ صرف 2014 میں 14 صحافیوں و میڈیا کا رکنان کو قتل اور متعدد پر حملے کیے گئے اور انہیں دھمکیاں دی گئیں۔

پیپلز پارٹی

مزید :

صفحہ آخر -