پٹرولیم مصنوعات پر عائد سیلز ٹیکس میں 5فیصد اضافہ لاہور ہائی کورٹ میں چیلنج

پٹرولیم مصنوعات پر عائد سیلز ٹیکس میں 5فیصد اضافہ لاہور ہائی کورٹ میں چیلنج
پٹرولیم مصنوعات پر عائد سیلز ٹیکس میں 5فیصد اضافہ لاہور ہائی کورٹ میں چیلنج

  

لاہور(نامہ نگارخصوصی)پٹرولیم مصنوعات پر عائد سیلز ٹیکس کو17 فیصد سے بڑھا کر 22 فیصد کرنے کا اقدام لاہور ہائیکورٹ میں چیلنج کردیاگیا۔تاجررہنمانعیم میراور مقامی وکیل اشتیاق چودھری کی طرف سے دائر دودرخواستوں میں موقف اختیار کیا گیا ہے کہ عالمی منڈی میں تیل کی قیمتیں کم ہورہی ہیں جبکہ پاکستانی حکومت عالمی منڈی کے مطابق عوام کو ریلیف فراہم نہیں کررہی.
درخواستوں میں کہا گیا ہے کہ حکومت نے ابتدائی طور پر توپٹرولیم مصنوعات کی قیمتوں میں کمی کی لیکن اب فیڈرل بورڈآف ریونیوکے ایک ایس آراو کے تحت پٹرولیم مصنوعات پر عائد سیلز ٹیکس سترہ فیصد سے بڑھا کر بائیس فیصد کردیاگیا ہے .
ماہرین کا کہنا ہے کہ سیلز ٹیکس میں پانچ فیصداضافے سے عوام کو پانچ ارب روپے کے ریلیف سے محروم ہوناپڑے گا.
درخواستوں میں مزیدموقف اختیار کیاگیا ہے کہ حکومت کو ایس آر او کے ذریعے سیلز ٹیکس میں اضافے کا اختیارنہیں ہے،صرف پارلیمنٹ ہی کسی ٹیکس میں اضافہ یانیاٹیکس عائدکرسکتی ہے لہذا پٹرولیم مصنوعات میں عائد سیلز ٹیکس میں پانچ فیصد اضافہ غیرآئینی اور غیرقانونی قراردیا جائے۔

مزید :

لاہور -