بغیر پیکنگ مصالحوں کی فروخت پر مکمل پابندی ،ملاوٹ مافیا کا گھیرا تنگ

بغیر پیکنگ مصالحوں کی فروخت پر مکمل پابندی ،ملاوٹ مافیا کا گھیرا تنگ

  

ملتان (سپیشل رپورٹر)نئے سال کا شاندار آغازکرنے کیلئے پنجاب فوڈ اتھارٹی نے ملاوٹ زدہ مرچ مصالحہ جات سے نجات کا جامع منصوبہ تیار کر لیاہے۔یکم جنوری 2019 کھلے مصالحوں کی فروخت کا آخری دن ہے ۔ 18 ماہ کے طویل بزنس ایڈجسٹمنٹ ٹائم کے بعد بغیرپیکنگ مصالحوں کی فروخت پرمکمل پابندی عائد کر دی گئی ہے۔نئے قانون کے مطابق پیکنگ پر اجزاء، وزن، تاریخ اجراء ، مدت استعمال، مینوفیکچرر کمپنی، سپلائر کا نام اور پتہ لکھنا لازمی (بقیہ نمبر13صفحہ12پر )

ہے۔تفصیلات کے مطابق پنجاب فوڈ اتھارٹی نے کھلے مصالحوں کی فروخت پر مکمل پابندی عائد کردی گئی ہے۔ڈی جی فوڈ اتھارٹی کیپٹن (ر) محمد عثمان نے آپریشن ٹیموں کو یکم جنوری 2019 سے کھلے مصالحوں کی فروخت کے خلاف کاروائیاں کرنے کی ہدایات جاری کر دی ہیں۔نئے قانون کے مطابق پیکنگ پراستعمال ہو نیوالے اجزاء، وزن، تاریخ اجراء ، مدتِ استعمال، مینوفیکچرر کمپنی، سپلائر کا نام اور پتہ درج کرنا لازمی ہوگا۔یاد رہے کھلے مصالحوں کی فروخت کے خلاف پابندی کا قانون جون 2017 میں لایا گیا تھا۔بعد ازاں سپائسز انڈسڑی کو 18 ماہ کاطویل بزنس ایڈجسٹمنٹ ٹائم دیا گیاجس کے مطابق 31دسمبر کھلے مصالحوں کی فروخت کا آخری دن تھا۔اس حوالے سے صوبہ بھر میں نئے قانون کے نفاذ سے پہلے مصالحہ انڈسڑی اور تاجروں کو تربیت بھی دی گئی ہے۔ڈی جی فوڈ اتھارٹی کا کہنا تھا کہ کھلے مصالحوں میں مضر صحت اجزاء کی باآسانی ملاوٹ کی جاسکتی ہے۔کھانے میں ایسے مصالحوں کا استعمال متعددبیماریوں کاباعث بنتا ہے۔اس سلسلے میں پنجاب فوڈ اتھارٹی نے کھلے مرچ مصالحوں کے خاتمے کے لیے ایکشن پلان بھی تیار کرلیا ہے۔ڈی جی فوڈ اتھارٹی نے واضح کیا کہ کھلے مصالحوں پر پابندی کا مقصد ملاوٹ مافیا کی چالاکیوں کا خاتمہ کرنا ہے۔اس حوالے سے آپریشنزٹیموں کو مکمل عملدرآمد کروانے کی ہدایات بھی جاری کر دی گئی ہیں۔کیپٹن(ر)محمد عثمان کا مزید کہنا تھا کہ قانون کی خلاف ورزی کرنے والوں کا لائسنس کینسل کرکے مال ضبط کر لیا جائے گا۔پنجاب فوڈ اتھارٹی خوراک کے معیار کو بہتر کرنے کے لیے تمام ممکنہ وسائل بروئے کار لا رہی ہے۔

B

مزید :

ملتان صفحہ آخر -