پی ٹی آئی سندھ میں حکومت بنانے کے خواب دیکھنا چھوڑ دے ، مرتضی وہاب

پی ٹی آئی سندھ میں حکومت بنانے کے خواب دیکھنا چھوڑ دے ، مرتضی وہاب

  

کراچی(اسٹاف رپورٹر )مشیر اطلاعات سندھ مرتضی وہاب نے کہا ہے کہ تحریک انصاف 50سال بھی لگا لے تو سندھ میں حکومت نہیں بنا سکتی، جے آئی ٹی کوئی صحیفہ آسمانی نہیں ہے، ایک دستاویز ہے، ہم عدالت میں اس کے خلاف تمام شواہد پیش کریں گے۔پیرکوسندھ اسمبلی کے باہر ہنگامی پریس کانفرنس سے خطاب کرتے ہوئے مرتضی وہاب نے کہاکہ ہمیں اللہ کی ذات اور پاکستان کی عدلیہ پر بھروسہ ہے، جیت انصاف اور پیپلز پارٹی کے نیک لوگوں کی ہوگی۔انہوں نے کہاکہ پچھلے پانچ ماہ سے گزارش کر رہا ہوں کہ تحریک انصاف کے ارکان آئین پاکستان پڑھ لیں، نادان دوستوں نے وزیر اعلی سندھ کے خلاف تحریک التوا جمع کروادی ہے۔انہوں نے کہا کہ اب جو معاملہ عدالت میں ہے اس پر ایوان میں کیسے بحث ہو گی، بریکنگ نیوز کے چکر میں یہ لوگ نہ جانے کیا کیا کر رہے ہیں۔مرتضی وہاب نے کہاکہ کیپٹیو پاور پلانٹس کے لیے جو تحریک التوا جمع کرائی گئی، اس تحریک کے بارے میں خرم شیر زمان کہتے ہیں کہ وہ مجھ سے کہہ کر جمع کروائی تھی۔ خرم شیر زمان بتائیں کہ اب انھوں نے یہ تحریک التوا کس کے کہنے پر جمع کرائی؟۔انہوں نے کہا کہ خرم شیرزمان تحریک التوا پربھی یوٹرن لیں گے۔مرتضی وہاب نے پیپلزپارٹی میں کسی بھی فارورڈ بلاک کے امکان کی سختی سے تردید کرتے ہوئے کہا کہ پارٹی متحد ہے اور کسی قسم کا کوئی فارورڈ بلاک نہیں بننے جارہا، فارورڈ بلاک بننے کی باتیں دس گیارہ سالوں سے کی جا رہی ہیں جو ہ محض افواہیں ہیں۔یہ پیپلزپارٹی میں فاروڈ بلاک کا دعوی کرتے ہیں لیکن ہمارے ایم پی ایز ہمارے ساتھ کھڑے ہیں۔مشیر اطلاعات نے کہا کہ تحریک انصاف کی حکومت خود 4 ووٹوں پر کھڑی ہے وہ دس سے 50 سال بھی لگا لیں تو سندھ میں حکومت نہیں بنا سکتے، سندھ میں پیپلز پارٹی ی آئینی حکومت قائم ہے جو اپنا آئینی مینڈیٹ پورا کرے گی۔انہوں نے کہاکہ حکومت نے بے نظیرکی شہادت کے دن بھی سازش کی اور پارٹی کے جذبات کا خیال نہیں رکھا۔ ماضی میں سازشوں کو بے نقاب کیا اب بھی کریں گے۔انہوں نے کہاکہ صدر مملکت اور گورنر سندھ کس طرح سیاسی کردار ادا کررہے ہیں، گورنر سندھ عمران اسماعیل پارٹی کے بجائے آئین کے مطابق حکومت سندھ سے مشاورت کریں۔انہوں نے کہا کہ صدر مملکت اور گورنر سندھ آئین کو فالو کریں، اب وہ تحریک انصاف کے رہنما نہیں رہے۔

مزید :

کراچی صفحہ اول -