مرتضیٰ وہاب سے چیف سیکرٹری داخلہ اور آئی جی سندھ کی ملاقات 

  مرتضیٰ وہاب سے چیف سیکرٹری داخلہ اور آئی جی سندھ کی ملاقات 

  

کراچی (اسٹاف رپورٹر)سندھ حکومت کے ترجمان مشیر  قانون، ماحولیات و ساحلی ترقی بیرسٹر مرتضی وہاب سے ایڈیشنل چیف سیکرٹری داخلہ ڈاکٹر عثمان چاچڑ اور آئی جی سندھ مشتاق مہر پولیس نے انکے دفتر ملاقات کی ترجمان کے مطابق ملاقات میں پولیس رولز اور جیلوں کی اصلاحات پر تبادلہ خیال کیا گیا۔ اس موقع پر گفتگو کرتے ہوئے بیرسٹر مرتضی وہاب کا کہنا تھا کہ حکومت سندھ نے پولیس اور جیل رولز میں اصلاحات و ترامیم کا فیصلہ کیا ہے جس سے نہ صرف جیلوں اور عدالتوں میں بوجھ کم ہوگا بلکہ معمولی نوعیت کے الزام کے قیدیوں / انڈر ٹرائل قیدیوں کو بھی فائدہ ہوگا انہوں نے کہا کہ بدقسمتی سے ہمارے معاشرے میں ایف آئی آر کٹتے ہی متلعقہ شخص کو گرفتار کرلیا جاتا ہے حالانکہ دنیا بھر میں مسلمہ اصول ہے کہ جب تک جرم ثابت نہ ہو اس وقت تک اس شخص کو گرفتار نہیں کیا جاتا لیکن ہمارے ہاں صورتحال اسکے برعکس ہے ترجمان سندھ حکومت کا کہنا تھا کہ عام ایف آئی آر سے نہ صرف متعلقہ شخص بلکہ اسکا پورا خاندان متاثر ہوتا ہے اور اسکی ضمانت میں بھی تاخیر کا سامنا کرنا پڑتا ہے بیرسٹر مرتضی وہاب کا کہنا تھا کہ ہماری جیلوں میں بڑی تعداد انڈر ٹرائل قیدیوں کی ہے جو معمولی نوعیت کے الزام کی وجہ سے قید بھگت رہے ہوتے ہیں اس سے نہ صرف جیلوں بلکہ عدالتوں پر بہت زیادہ بھی بوجھ پڑتا ہے۔بیرسٹر مرتضی وہاب کا کہنا تھا کہ سندھ حکومت نے اس ضمن میں پولیس اور جیل رولز میں اصلاحات کا فیصلہ کیا ہے تاکہ جیلوں میں انڈر ٹرائل قیدیوں کی تعداد کو کم اور عدالتوں پر بوجھ کو بھی کم کیا جاسکے۔ بیرسٹر مرتضی وہاب نے کہا کہ ہماری کوشش ہوگی کہ ایسی قانون سازی و ترامیم کی جائیں جسکے بعد صرف ایسے ملزمان کو گرفتار کیا جائے جو کہ عادی مجرم ہوں اور معاشرے کے لئے خطرہ ہوں ان ترامیم و اصلاحات پر تفصیلی غور و خوض شروع کردیا گیا ہے جلد اس سلسلے میں موثر ترامیم کی جائینگی جسکے ہمارے معاشرے پر مثبت اثرات مرتب ہونگے۔

مزید :

صفحہ اول -