"اسرائیل کو تسلیم کرنا پاکستان کے نظریئے پر سمجھوتہ ہےجوکبھی نہیں کرسکتا" وزیراعظم نے واضح کر دیا

"اسرائیل کو تسلیم کرنا پاکستان کے نظریئے پر سمجھوتہ ہےجوکبھی نہیں کرسکتا" ...
سورس:   File

  

اسلام آباد(ڈیلی پاکستان آن لائن) وزیراعظم عمران خان نے کہا ہے کہ ہر چیز پر سمجھوتہ کر سکتا ہوں لیکن نظریئے پر نہیں ، اسرائیل کو تسلیم کرنا پاکستان کے نظریئے پر سمجھوتہ کرنا ہے جو میں کبھی نہیں کرسکتا۔  ان کا کہنا تھا کہ یوٹرن برا تب ہوتا ہے جب آپ نظریئے پر سمجھوتہ کرتے ہیں۔

نجی ٹی وی دنیا نیوز کے ساتھ گفتگو کرتے ہوئے وزیراعظم نے کہا کہ آپ کو منزل پر پہنچنے کے لیے کہیں نہ کہیں سمجھوتہ کرنا پڑتا ہے۔ انہوں نے واضح کیا کہ اگر میں اپوزیشن کو ان کی کرپشن پر این آر او دیتا ہوں تو اپنے نظریئے پر سمجھوتہ کرتا ہوں جو کہ میں ہرگز نہیں کر سکتا ۔ انہوں نے کہا کہ کسی بھی ملک کی تباہی میں حکمرانوں کی کرپشن کا بہت بڑا ہاتھ ہوتا ہے۔ وہ ملک ترقی نہیں کرسکتا جس کا وزیراعظم اور وزراء کرپٹ ہوں، اگروزیراعظم کرپشن کرے تونیچے تک کرپشن ہوتی ہے۔

عامر کیانی کے متعلق سوال کے جواب میں وزیراعظم نے جواب دیا کہ عامر کیانی کو کرپشن کی وجہ سے نہیں انتظامی معاملات میں کوتاہی کی وجہ سے نکالا تھا۔ انہوں نے کہا کہ ملکی تاریخ میں پہلی بار شوگر مافیا کے خلاف کارروائی کی گئی۔ چینی کےمعاملے پر انکوائری میرٹ پر ہورہی ہے، شوگرمافیامیں سب سےپہلےشریف خاندان کا نام آیا۔ آصف زرداری، نوازشریف اور وزیروں نے شوگر ملز بنائیں، چینی صرف کاغذوں میں ایکسپورٹ کی جاتی تھی۔ 

مزید :

قومی -علاقائی -اسلام آباد -اہم خبریں -