پارٹی نام، پرچم اور انتخابی نشان، ایم کیو ایم اتحاد میں رکاوٹ شروع

پارٹی نام، پرچم اور انتخابی نشان، ایم کیو ایم اتحاد میں رکاوٹ شروع

  IOS Dailypakistan app Android Dailypakistan app


کراچی (سٹاف رپورٹر)ایم کیو ایم کے تمام دھڑوں کو متحد کرنے کی کوششوں میں تیزی سیسامنے آنے والی پیش رفت میں رکاوٹ آنا شروع ہوگئی ہے۔ ایم کیو ایم کو پی ایس پی کی جانب سے پارٹی کے نام پرچم اور انتخابی نشان کو تبدیل کرنے کا دباو ہے،تاہم ڈاکٹر خالد مقبول صدیقی نے کہا ہے کہ اس حوالے سے کوئی دباو قابل قبول نہیں ہے۔ذرائع کا کہنا ہے کہ ایم کیو ایم پرپارٹی کا نام،پرچم اور انتخابی نشان تبدیل کرنے کا بہت زیادہ دباو ہے،مگر انہوں نے اس پر رضامندی ظاہر نہیں کی ہے،جبکہ پی ایس پی کی طرف سے بھی پارٹی کے نام،پرچم اور انتخابی نشان کو تبدیل کرنے کی تجویز دی گئی ہے، اس حوالے سے اگلے دو سے تین دن میں صورت حال مزید واضح ہوگی۔ امکان ہے کہ ایم کیو ایم کا ایک وفد ہفتے اتوار تک ڈاکٹر فاروق ستار سے ملاقات کر کے انہیں ایم کیو ایم میں واپسی کی دعوت دیگا، انضمام کی صورت میں سینٹرل کمیٹی بنائی جائے گی جس میں ڈاکٹر خالد مقبول سربراہ جبکہ ارکان میں ڈاکٹر فاروق ستار، مصطفی کمال، انیس قائم خانی، خواجہ اظہار، وسیم اختر اور دیگر شامل ہوں گے۔

مزید :

صفحہ اول -