افغا ن صدرنے ملک کی تاریخ میں پہلی بار سپریم کورٹ کیلئے کسی خاتون جج کو نامزد کردیا

افغا ن صدرنے ملک کی تاریخ میں پہلی بار سپریم کورٹ کیلئے کسی خاتون جج کو نامزد ...

  

کابل(آئی این پی) افغا ن صدر اشرف غنی نے ملک کی تاریخ میں پہلی بار سپریم کورٹ کیلئے کسی خاتون جج کو نامزد کردیا ۔غیر ملکی میڈیا کے مطابق افغانستان جج ایسوسی ایشن کی سربراہ اور کم عمر افراد کی عدالت کی جج انیسہ رسولی کو سپریم کورٹ کے نو رکنی بینچ کے لیے نامزد کردیا گیا ہے۔انیسہ رسولی کی نامزدگی کئی اسلامی گروپوں کی مخالفت کی وجہ سے ایک ماہ سے تاخیر کا شکار تھی۔خواتین کے حقوق کے لئے کام کرنے والے افراد اور سیاستدانوں کے کابل میں ہونے والے ایک پروگرام سے خطاب کے دوران افغان صدر اشرف غنی کا کہنا تھا کہ ’مجھے اس بات پر فخر ہے کہ میں نے پہلی بار افغان سپریم کورٹ کے لیے کسی خاتون کو نامزد کیا ہے‘۔انھوں نے کہا کہ سپریم کورٹ کے لیے خاتون جج کو نامزد کرنے سے عدالتی نظام میں فرق نہیں آئے گا اور اس کے لیے انھیں علماء (اسلامی اسکالرز) کی مکمل حمایت حاصل ہے۔اشرف غنی نے مزید کہا کہ وہ چاہتے ہیں کہ تمام وزارتیں نائب وزیر کے طور پر خواتین کو منتخب کریں۔یاد رہے کہ سپریم کورٹ کے جج کے طور پر کام کا آغاز کرنے کے لیے انیسہ رسولی کو ابھی افغان پارلیمنٹ سے منظوری کی ضرورت ہے۔اس اعلان کو اشرف غنی اور چیف ایگزیکیو عبداللہ عبداللہ کے افغانستان میں مخلوط حکومت کے قیام کے بعد خواتین کو حکومت کے اہم عہدوں پر ترقی دینے کی کوششوں کے حوالے سے دیکھا جارہا ہے۔افغان آئین کے مطابق سپریم کورٹ کے جج کو 10 سال کے لیے نامزد کیا جاتا ہے۔اس قبل اپریل میں قانون سازوں نے اشرف غنی کی کابینہ میں 4 خواتین کو شامل کرنے کی اجازت دی تھی۔رواں ماہ کے اوائل میں افغان دارالحکومت کابل میں خواتین کے سپریم کورٹ کے جج طور پر نامزدگی کے خلاف ایک مظاہرہ بھی کیا گیا تھا۔

مزید :

صفحہ اول -