کاغذات نہ دکھانے پر مغلپورہ پولیس کا 2 موٹر سائیکل سواروں پر بہمیمانہ تشدد

کاغذات نہ دکھانے پر مغلپورہ پولیس کا 2 موٹر سائیکل سواروں پر بہمیمانہ تشدد

  

لاہور(کرائم سیل) مغلپورہ کے علاقے میں ایس ایچ او مغلپورہ نے ملازمین کے ہمراہ ناکے پر موٹرسائیکل کے کاغذات نہ دکھانے پر دو افراد کو بہیمانہ تشدد کا نشانہ بنا ڈالا ، واقعہ کا علم ہونے پر ڈی آئی جی آپریشن لاہور ڈاکٹر حیدر اشرف نے ایک تھانیدار سمیت تین اہلکاروں کے خلاف مقدمہ درج کروا کے ان کو حوالات میں بند کر وا دیا جبکہ ایس ایچ او کے خلاف انکوائری کا حکم دے دیا ۔ بتایا گیا ہے کہ ایس پی سول لائن ڈویژن نے اپنی ڈویژن کے تمام ایس ایچ اوز کو روزانہ 50موٹرسائیکلیں تھانے میں بند کرنے کا حکم دیا ہے جس پر ایس ایچ او تھانہ مغلپورہ انسپکٹر رائے ناصر عباس نے شالیمار لنک روڈ پر ناکہ لگایا ہوا تھا ۔مقامی رہائشی شاہد اور علی موٹرسائیکل پر جا رہے تھے کہ ایس ایچ او نے ناکے پر روک کر کاغذات مانگے، کاغذات نہ ہونے پر ایس ایچ او نے دونوں نوجوانوں کو ناکے پر ہی تشدد کا نشانہ بنانا شروع کر دیا اورتھانے لے جا کر مزید چھترول کرنے کے بعد موٹرسائیکل سمیت بند کر دیا جس پر اہل علاقہ نے احتجاج کیا۔ ایس ایچ او کے بہیمانہ تشدد کی فوٹیج منظر عام پر آنے کے بعد ڈی آئی جی آپریشن لاہور ڈاکٹر حیدر اشر ف نے واقعہ کا نوٹس لیکر تھانیدار خادم حسین ، کانسٹیبل نوید افضل اور عابد حسین کے خلاف مقدمہ درج کروا کے حوالات میں بند کروا دیاجبکہ ایس ایچ او رائے ناصر کے خلاف انکوائری کا حکم دے دیا ۔ شہریوں نے انسپکٹر جنرل پولیس پنجاب مشتاق احمد سکھیرا سے اپیل کی ہے کہ وہ شہریوں کو تشدد کا نشانہ بنانے والے ایس ایچ اوز کے خلاف فوری ایکشن لیں اور سخت کارروائی کا حکم دیں ۔

مزید :

علاقائی -