جاپان میں مسلمانوں کے خلاف تاریخ کا سب سے خوفناک قانون متعارف کروادیا گیا

جاپان میں مسلمانوں کے خلاف تاریخ کا سب سے خوفناک قانون متعارف کروادیا گیا
جاپان میں مسلمانوں کے خلاف تاریخ کا سب سے خوفناک قانون متعارف کروادیا گیا

  

ٹوکیو(مانیٹرنگ ڈیسک) حالیہ چند سالوں میں دہشت گردانہ کارروائیوں کا گراف بلند ہونے پر دنیا میں مسلمانوں اور اسلام کے خلاف نفرت کا لیول بھی بہت بلند ہو چکا ہے۔ پہلے مغرب اور یورپ ہی مسلمانوں پر طرح طرح کی پابندیاں لگا رہے تھے، اب جاپان بھی ان کے نقش قدم پر چل نکلا ہے۔ برطانوی اخبار دی انڈیپنڈنٹ کی رپورٹ کے مطابق جاپانی سپریم کورٹ نے بھی مسلمانوں کی کڑی نگرانی کرنے کے حکومتی فیصلے پر مہرتصدیق ثبت کر دی ہے۔ جاپانی حکومت نے اس سے قبل مسلمانوں کی نگرانی کا فیصلہ کیا تھا جسے مسلمانوں نے سپریم کورٹ میں چیلنج کر دیا تھا تاہم اب سپریم کورٹ کی طرف فیصلہ آ گیا ہے جس میں اسے مسلمانوں کی نگرانی کرنے کی اجازت دے دی گئی ہے۔

پاکستانیوں کیلئے شاندار آفر متعارف، اگر آپ بھی سستا ترین فضائی ٹکٹ حاصل کرنا چاہتے ہیں تو تفصیلات جاننے کیلئے یہاں کلک کریں‎

جاپانی حکومت اب مساجد، حلال کھانوں کے حامل ہوٹلوں، مسلمان تنظیموں و دیگر تمام ایسی جگہوں کی کڑی نگرانی کرے گی جو مسلمانوں سے کسی بھی حوالے سے منسوب ہیں۔رپورٹ کے مطابق ایک جاپانی مسلمان محمد فیوجیتا کا کہنا ہے کہ ”حکومت نے ہمیں دہشت گردی کے حوالے سے مشکوک بنا دیا ہے حالانکہ ہم نے کبھی کوئی غلط کام نہیں کیا۔“ محمد فیوجیتا جاپانی شہری ہے اور اس نے 20سال قبل اسلام قبول کر لیا تھا۔ وہ بھی ان 17مسلمانوں میں شامل تھا جنہوں نے جاپانی حکومت کے اس فیصلے کو سپریم کورٹ میں چیلنج کیا تھا۔ ان مسلمانوں کے وکیل جنکو ہیاشی کا کہنا تھا کہ ”عدالت کا کہنا تھا کہ ہمارا کیس آئینی ہی نہیں ہے۔ ہم تاحال یہ پتا چلانے کی کوشش کر رہے ہیں کہ ہمارا کیس کس طرح غیرآئینی تھا۔“

مزید : بین الاقوامی