وزیر اعظم کا احتساب نہیں کرنا تو پھر جو جیلوں میں ہیں ، ان کو بھی چھوڑ دیا جائے ، عمران خان

وزیر اعظم کا احتساب نہیں کرنا تو پھر جو جیلوں میں ہیں ، ان کو بھی چھوڑ دیا ...

لاہور( این این آئی) پاکستان تحریک انصاف کے چیئرمین عمران خان نے کہا ہے کہ اگر وزیر اعظم کا احتساب نہیں کرنا تو پھر کسی کا بھی نہ کریں اور جو جیلوں میں ہیں ان کو بھی چھوڑ دیاجائے ، وزیر اعظم اور ان کے خاندان کا احتساب نہ ہوا تو ملک سے کرپشن ،غربت اور امیر غریب کا فرق کبھی ختم نہیں ہو گا،تمام ا پوزیشن جماعتیں وزیر اعظم کے احتساب کے معاملے پر متفق ہیں اور ابھی تک اپوزیشن ہمارے ساتھ ہے لیکن اگر ہمیں تنہا بھی سڑکوں پر آنا پڑا تو آئیں گے ۔نجی ٹی وی سے خصوصی گفتگو کرتے ہوئے پانامہ لیکس میں ثابت ہو گیا ہے کہ وزیر اعظم نواز شریف کرپشن اور ٹیکس چوری کا پیسہ باہر لے کر گئے ہیں اور اس انکشاف کے بعد وہ بچنے کی کوشش کر رہے ہیں ۔ حکومت ٹی او آر زکے ذریعے بھی ایسا ہی چاہتی ہے ۔ تمام اپوزیشن متفق ہے کہ اگر وزیر اعظم کا احتساب نہیں کرنا تو پھر کسی کا نہ کریں اور جو جیلوں میں بھرے ہوئے ہیں ان کو بھی چھوڑ دیاجائے ۔ اگر وزیر اعظم پر قانون کا نفاذ نہیں ہونا تو پھر کسی پر اس کا نفاذ نہ کریں ۔وزیر اعظم کی چوری واضح طور پر پکڑی گئی ہے جس میں ثابت ہوا ہے کہ انہوں نے کرپشن اور چوری سے بیرون ملک اربوں روپے کی جائیدادیں بنائی ہیں۔ اگر ان کا اور ان کے خاندان کا احتساب نہ ہوا تو ملک سے کرپشن ، غربت اور امیر غریب کا فرق کبھی ختم نہیں ہوگا ۔ اگرہم نے احتساب کر دیا تو پاکستان بن جائے گا ۔ مسلم لیگ (ن) وزیر اعظم کو بچانے کی پوری کوشش کرے گی لیکن اپوزیشن وزیر اعظم کے احتساب کے لئے متحد ہے ۔ ابھی تک اپوزیشن ہمارے ساتھ ہے لیکن اگر ہمیں تنہا بھی چلنا پڑا تو سڑکوں پر آئیں گے ۔انہوں نے مزید کہا کہ اس میں کوئی شک نہیں کہ وزیر اعظم کی طبیعت ٹھیک نہیں اور ڈاکٹروں نے کہا ہے کہ وہ دباؤ نہیں لے سکتے اسی لئے باہر بیٹھے ہوئے ہیں اور مہنگی جگہوں سے شاپنگ کر رہے ہیں ۔ ان کی طبیعت ایسی نہیں کہ دباؤ لے سکیں لیکن انہیں دباؤ تو لینا پڑے گا کیونکہ انکی کرپشن کے واضح انکشافات ہو گئے ہیں۔

مزید : صفحہ اول