وفاق دھماکوں میں متاثرین کیلئے انصاف پر مبنی امداد کا اعلان کرے

وفاق دھماکوں میں متاثرین کیلئے انصاف پر مبنی امداد کا اعلان کرے

  



خیبر ایجنسی (عمران شنواری )احمد پور شرقیہ بہالپور ملتان کی المناک واقعے میں جاں بحق افراد کے لواحقین کو بیس ،بیس لاکھ امدادی رقوم دینا خوش آئند ، لیکن چھ سال قبل لنڈیکوتل میں اسی طرح واقعے میں جاں بحق افراد کے لواحقین کو صرف تین ،تین لاکھ امدادی رقم دینا کہاں کا انصاف ہیںِ ؟خیبر ایجنسی کے عوام نے امدادی رقم بڑھانے کامطالبہ کیا ،ہر موقع پر قبائلی عوام کے ساتھ ظلم اور نا انصافی کی گئی ہے ،عمائدین خیبر ایجنسی رمضان المبارک کے بابرکت مہینے میں 25جون کو ایک المناک اور دلخراش واقع صوبہ پنجاب احمد پور شرقیہ بہالپور ملتان میں اس وقت پیش آیا جب ایک پٹرول سے بھری ہوئی ٹینکر مین روڈ پر الٹ گئی جس سے ہزاروں لیٹر پٹرول بہہ گئے وہاں پر نزدیک رہائش پذیر لوگ پٹرول کو لے جانے کیلئے سینکڑوں کی تعداد میں اکھٹاہو گئے رپورٹس کی مطابق کہ ایک شہری نے اس دوار ن سگریٹ پھینکا جس سے آگ بھڑک اٹھی جس سے تقریبا 167افراد جاں بحق اور درجنوں زخمی ہو گئے اور درجنوں موٹر سائیکل اور کئی گاڑیاں جل کر تباہ ہو گئے دلخراش واقعے سے سارے پاکستان پر غم کے بادل چھا گئے واقعے کے دوسرے دن وزیراعظم نواز شریف اور پنجاب کے وزیراعلی بہالپور گئے اور جاں بحق افراد کی لواحقین سے تعزیت کی گئی اور فی کس بیس لاکھ روپے کے چیک بھی دئیے گئے اسی طرح زخمیوں کو ملنے کیلئے ہسپتال پہنچے اور فی زخمی دس لاکھ روپے کے چیکس دئیے اور جاں بحق افراد کے خاندان کیلئے نوکریوں کا اعلان بھی کیا گیا اس طرح کا ایک واقعہ 2011میں لنڈیکوتل گورنمنٹ ہائی سکول کے قریب اس وقت پیش آیا تھا جب نیٹو کو سپلائی کرنے والے آئل ٹینکر خراب ہو گئی اور ان سے بھی آئیل بہنا شروع ہو گئی وہاں کے لوگ بھی تیل کو ڈبوں میں ڈالنے کیلئے اکھٹا ہو گئے کہ اس دوران آئیل ٹینکر میں زوردار بم دھماکہ ہوا جس کے نتیجے میں چار بھائیوں سمیت پندرہ افراد جاں بحق ہو گئے تھے اور کئی افراد زخمی ہو گئے تھے جاں بحق افراد میں محمد ریحان عرف(مداین)کے چار جوان بیٹے بھی شامل تھے اس وقت نہ ملک کے وزیر اعظم نے اور نہ خیبر پختونخوا کے گورنر نے واقعے پر افسو س کا اظہار کیا بلکہ پولیٹیکل انتظامیہ کی طرف جاں بحق افراد کو فی کس تین لاکھ اور زخمی کو پچاس ہزار روپے کے امدادی رقم دئیے گئے جو بہاولپور کی واقعہ کی نسبت بہت کم ہیں اس لئے خیبرا یجنسی عمائدین نے مطالبہ کیا ہے کہ اب بھی لنڈیکوتل کے لوگوں کے زخم تازہ ہیں اور لواحقین کے ساتھ بہالپور واقعہ کی طرح امداد کی جائے اور انکے خاندان کو نوکریا ں بھی دیا جائے تاکہ قبائلی عوام میں مایوسی کی فضا ختم ہو سکے

مزید : کراچی صفحہ اول


loading...