قزاقستان میں 92 سالہ سابق فوجی کے کولہے کا آپریشن، دوسری جنگ عظیم میں لگنے والی گولی نکال لی گئی

قزاقستان میں 92 سالہ سابق فوجی کے کولہے کا آپریشن، دوسری جنگ عظیم میں لگنے ...
قزاقستان میں 92 سالہ سابق فوجی کے کولہے کا آپریشن، دوسری جنگ عظیم میں لگنے والی گولی نکال لی گئی

  



آستانہ (ڈیلی پاکستان آن لائن) دنیا بھر میں دوسری جنگ عظیم میں حصہ لینے والے صرف 900 لوگ زندہ ہیں جن میں سے ایک قزاقستان کے دارالحکومت آستانہ میں مقیم ہیں ۔ 92 سالہ بالتابے کازیف کو گزشتہ دنوں کولہے میں درد ہوا تو انہوں نے ڈاکٹر سے رجوع کیا ۔ ڈاکٹر نے طبی معائنے کے بعد بالتابے کا آپریشن کیا اور ان کے کولہے سے دوسری جنگ عظیم میں لگنے والی 73 سال پرانی گولی نکال لی۔

غیر ملکی میڈیا کے مطابق دوسری جنگ عظیم 1939 سے 1945 کے دوران لڑی گئی ، یہ وہ وقت تھا جس وقت پوری دنیا جہنم کی طرح جنگ کے شعلوں میں دہک رہی تھی اور محتاط اندازوں کے مطابق اس جنگ میں پانچ سے ساڑھے 8 کروڑ لوگ لقمہ اجل بنے۔

دستیاب ریکارڈ کے مطابق دنیا بھر میں جنگ عظیم دوئم میں حصہ لینے والے صرف 900 لوگ زندہ بچے ہیں جن میں سے ایک قزاقستان کے دارالحکومت آستانہ میں مقیم ہے۔ دوسری جنگ عظیم میں حصہ لینے والے بالتابے کازیف نامی 92 سالہ سابق فوجی کو گزشتہ دنوں اپنے کولہوں میں درد محسوس ہوا جس پر اس نے اپنے ڈاکٹر سے رجوع کیا۔

ڈاکٹرز نے چیک اپ کے بعد پتا لگایا کہ اس کے کولہے میں ایک گولی پھنسی ہوئی ہے۔ ڈاکٹرز نے کامیاب آپریشن کرتے ہوئے بالتابے کازیف کے کولہے سے 73 سال پرانی گولی نکال دی ، بالتابے کو یہ گولی دوسری جنگ عظیم کے دوران لگی تھی۔

دوسری جنگ عظیم کے سپاہی کے جسم سے گولی نکالنے والے ڈاکٹر کا کہنا ہے کہ بالتابے اپنی سوجی ہوئی ٹانگ لے کر ہمارے پاس آیا اور بتایا کہ اس کو لگی ہوئی گولی اب تنگ کر رہی ہے۔ جب ہم نے اس کا معائنہ کیا تو اس کے کولہے میں واقعی گولی لگی ہوئی تھی جسے سرجری کرکے نکالنے میں صرف سات منٹ کا وقت لگا۔

واضح رہے کہ بالتابے کو یہ گولی 1944میں دوسری جنگ عظیم کے دوران یوکرائن میں لگی تھی۔ بالتابے نے دوسری جنگ عظیم کے دوران سب مشین گن سپیشلسٹ کے طور پر حصہ لے کر یوکرائن میں خدمات سر انجام دی تھیں۔

انہوں نے جنگ کے دوران دارالحکومت کیف سمیت متعدد شہروں کا قبضہ چھڑانے میں اہم کردار ادا کیا تھا۔جنگ عظیم میں ان کی خدمات کو دیکھتے ہوئے انہیں سرخ ستارے کے اعزاز سے نوازا گیا تھا جبکہ انہیں کئی میڈلز بھی دیے گئے تھے۔

ویڈیو دیکھیں

مزید : ڈیلی بائیٹس