یہ شخص انسان نہیں درندہ ہے،اس نے 6 سالہ بچی کے ساتھ وہ حر کت کی جو شائد ہی کسی نے کی ہو ،عدالت نے بڑی سزا سنا دی

یہ شخص انسان نہیں درندہ ہے،اس نے 6 سالہ بچی کے ساتھ وہ حر کت کی جو شائد ہی کسی ...
یہ شخص انسان نہیں درندہ ہے،اس نے 6 سالہ بچی کے ساتھ وہ حر کت کی جو شائد ہی کسی نے کی ہو ،عدالت نے بڑی سزا سنا دی

  



میکسیکو سٹی(نیوز ڈیسک) میکسیکوکی انڈرورلڈ سے تعلق رکھنے والے سفاک مجرم مارسیانو ملان واسکیز کے متعلق مشہور ہے کہ وہ کسی بھی وقت کسی بھی شخص کو بے رحمی سے قتل کر دیتا تھا۔ اگرچہ اس کے جرائم کی فہرست طویل ہے لیکن اس نے ایک ایسا بھیانک جرم بھی کیا کہ کسی کے دل میں رائی برابر انسانیت بھی ہو تو وہ اس کا تصور کر کے ہی کانپ جائے۔

دی انڈی پینڈٹ کی رپورٹ کے مطابق مارسیانو نے ایک چھ سالہ بچی کے جسم کو اس کے والدین کے سامنے کلہاڑے کے وار کر کے ٹکڑے ٹکڑے کر دیا تھا۔ اسے اس جرم کی پاداش میں 7 بار عمر قید کی سزا سنائی گئی اور اب وہ امریکا کی ایک جیل میں قید ہے۔

مارسیانو میکسیکو کے مشہور لاس زیتاس گینگ کا سربراہ تھا وہ عام طور پر لوگوں کو کلہاڑے سے ہی قتل کیا کرتا تھا اور اکثر ان کے جسموں کو جلا بھی دیتا تھا۔ اس نے کم سن بچی کو اس کے والدین کے سامنے کلہاڑے کے وار کر کے ہلاک کیا اور اس کے والد سے کہا ’’ میں یہ کام اس لیے کر رہا ہوں کہ تم مجھے ہمیشہ یاد رکھو۔ ‘‘ اس بھیانک جرم کے بعد اس نے بچی کے والدین کو بھی کلہاڑے کے وار کر کے ہلاک کر ڈالا۔

عدالتی کارروائی کے دوران بتایا گیا کہ لوگوں کو قتل کرنے کا مارسیانو کا یہ مخصوص انداز تھا۔ وہ اکثر لوگوں کو ان کے عزیز ترین رشتہ داروں کے سامنے قتل کرتا تھا اور پھر اپنے پیاروں کی موت کا بھیانک منظر دیکھنے والوں کو بھی کلہاڑے کے وار کر کے قتل کر دیتا تھا۔ اس پر یہ الزام بھی ہے کہ وہ 2011 میں لاپتہ ہونے والے 300 افراد کے اغوا میں بھی ملوث تھا۔ ان افراد میں سے کسی کو بھی دوبارہ نہیں دیکھا گیا۔

مزید : ڈیلی بائیٹس