شیخ چلی وژن کی حامل پنجاب حکومت نے صوبہ اور عوام کیلئے کچھ نہیں کیا، مسلم لیگ ن، پیپلز پارٹی

شیخ چلی وژن کی حامل پنجاب حکومت نے صوبہ اور عوام کیلئے کچھ نہیں کیا، مسلم لیگ ...

  

لاہور(این این آئی) اپوزیشن نے پنجاب کے آئندہ مالی سال کے بجٹ اورحکومت کی کارکردگی کے حوالے سے 11صفحات پر مشتمل”وائٹ پیپر“ جاری کرتے ہوئے کہا ہے کہ شیخ چلی والاوژن رکھنے والوں نے صوبے اور عوام کی ترقی کیلئے کچھ نہیں کیا اس لئے کابینہ سمیت مستعفی ہو جائیں،کورونا وائرس سے پہلے ہی معیشت کو تباہ کر دیاگیا تھا،پی ٹی آئی کے 350ارب ترقیاتی بجٹ میں سے صرف 36فیصد ہی خرچ کیاگیا،پورے پنجاب کا ترقیاتی بجٹ 100 ارب سے اوپر نہیں گیا،تعلیم و صحت کے بجٹ میں حکومت نے کٹ لگایا،اگر سر پلس بجٹ ہے تو پھر سرکاری ملازمین کی تنخواہوں اور ریٹائرڈ ملازمین کی پنشن میں اضافہ کیوں نہیں کیا گیا۔سینئر رہنما مسلم لیگ (ن) کے رانا مشہود احمد خان نے پیپلز پارٹی نے پارلیمانی لیڈر سید حسن مرتضیٰ،ملک احمد خان، چوہدری اقبال گجر اوردیگر کے ہمراہ نجی ہوٹل میں منعقدہ پریس کانفرنس میں وائٹ پیپر جاری کیا۔رانا مشہود نے کہا کہ موجودہ حکومت پنجاب ایجوکیشن فاؤنڈیشن کو فنڈز نہیں دے سکی،صحت کے بجٹ کو 50فیصد کا کٹ لگایا گیا،عوام دشمن حکومت نے بجٹ میں عوام سے مذاق کیا،بجٹ ٹیکس فری نہیں 200فیصد ٹیکس پہلے ہی عوام پر لگادیاگیا،پنجاب کی گلیوں سڑکوں اور دیہاتوں میں لوگ جھولیاں اٹھا اٹھا کر حکومت کو کوس رہے ہیں،پاکستان گندم ایکسپورٹ والا ملک تھا لیکن آج گندم امپورٹ کررہاہے،بروقت سپرے ہوتا تو ٹڈی دل حملہ نہ کرتا، حکومت نے 2 لاکھ 85ہزار ایکڑ زرعی رقبہ تباہ کردیا، دو سال میں ایک بھی عوامی منصوبہ نظر نہیں آ رہا،حکومت کو چیلنج ہے کہ ایک بھی منصوبہ بتا دے،ہم سمجھتے ہیں سب کو برابری کے حقوق دینے ہیں لیکن حکومت نے اقلیتوں کا بجٹ میں بھی 70فیصد کم کیا،انڈوں کٹوں کی پالیسی والے بتائیں صوبے میں کتنے فارمزبنائے۔ سردار عثمان بزدار اور ان کی ٹیم جھوٹے، مافیا کو تحفظ دینے والے لوگ ہیں،آٹا،چینی،گندم پٹرول کی مد میں عوام کو چونا لگایا، پاکستان میں بھارت اوربنگلہ دیش کے مقا بلے میں پیٹرول سستا ہونے کا حکومتی دعویٰ جھوٹ ہے، کیا ڈالر بھارت اور بنگلہ دیش میں ایک سو چھیاسٹھ کاہے؟ کہتے تھے بسکٹس سے کام چلائیں گے لیکن وفاق میں بجٹ کو منظور کرانے کیلئے پانچ دن کھابے چلتے رہے۔قوم کو اکٹھا ہوکر جدوجہد کرنا ہوگی۔پنجاب کے عوام دشمن بجٹ کو اپوزیشن نے مشترکہ طورپر مسترد کر دیاہے۔اگر آپ کا بجٹ سر پلس ہے تو سرکاری ملازمین کی تنخواہوں اور ریٹائرڈ ملازمین کی پنشن میں دس فیصد اضافہ کریں،ڈاکٹرز کو دوگنا تنخواہیں دیں،آپ اپنا وعدہ پورا کریں،فرنٹ لائن فورس ڈاکٹرز کو سہولیات دی جائیں۔ یونیورسٹیوں پر نئی ترمیم لاکر وائس چانسلر زکے اختیارات کو ختم کرنا چاہتے ہیں اور چندے سے ادارے چلانا چاہتے ہیں،پنجاب بھر میں وائی فائی فری اورلیپ ٹاپ دوبارہ دیئے جائیں۔ ہمارا مطالبہ ہے کہ ملک کو تاریخ کی بدترین دلدل میں دھکیلنے پر وزیر اعظم اور وزیراعلیٰ پنجاب کابینہ سمیت استعفیٰ دیں۔ہم نے دہشتگردی اورلوڈ شیڈنگ کا خاتمہ کر کے معیشت کو ترقی دی۔عمران نیازی اینڈ کمپنی نے عوام کے نصیبوں پر پانی پھیردیا۔اس موقع پر سید حسن مرتضیٰ نے کہا حکومت کیخلاف عدم اعتماد کی تحریک بھی لائیں گے،ضمیروں کو خرید کر اور یرغمال بناکر حکومت کھڑی کی گئی اور آج حکومت کے اتحادی بھی آوازیں اٹھا رہے ہیں، تبدیلی بہت جلد آئے گی۔کورونا وباء نہ ہوتی تو ہم عوام کیساتھ سڑکوں پر ہوتے،حکومت کو اور موقع دینا عوام سے زیادتی ہوگی۔

ن لیگ، پی پی

لاہور (نمائندہ خصوصی) ترجمان پنجاب حکومت مسرت جمشید چیمہ نے کہا ہے کہ کرپشن اور لوٹ مار کے ذریعے قوم کا خون چوسنے والی مسلم لیگ (ن) اورپیپلزپارٹی کو حکومت کی کا رکردگی پر وائٹ پیپر جاری کرنے سے پہلے اپنے کرتوتوں پر بلیک پیپر جاری کرنا چاہیے تھا،اپوزیشن بجٹ پر جس فورم پر چاہے اعدادوشمار کیساتھ مناظرہ کر لے اور دعویٰ ہے کہ انہیں سوائے سبکی کے کچھ حاصل نہیں ہوگا،ایک دوسرے کی سیاست کو سہارا دینے کیلئے پیپلز پارٹی اور(ن) لیگ والے ایک بار پھر بھائی بھائی بن گئے ہیں۔ پنجاب اسمبلی کے اجلاس میں شرکت کے موقع پر اپوزیشن کے وائٹ پیپر جاری کرنے پر میڈیا سے گفتگو کرتے ہوئے انہوں نے کہا وائٹ پیپر اعدادوشمارکا موازنہ ہوتا ہے جس سے اپوزیشن عاری ہے، ان کے پاس صرف کرپشن اور لوٹ مار کے اعدادوشمار ہیں جو پوری قوم کے سامنے پہلے ہی آ چکے ہیں۔انکاکہنا تھا اپوزیشن نے کہا بجٹ میں ٹیکسز کا بوجھ لادھ گیا جبکہ فنانس بل کے مطابق درجنوں شعبوں کو ٹیکسز میں چھوٹ دی گئی،مالی مشکلات کے باوجود مختلف شعبوں کو 56ارب روپے کا ٹیکس ریلیف دیاگیا،حقیقت میں عوام دوست،ٹیکس فری بجٹ پر اپوزیشن کے پیٹ میں مروڑ اٹھ رہے ہیں۔ اپوزیشن کا '' میں نہ مانوں '' کا بیانیہ ان کی اپنی سیاسی رسوائی کا سبب بن رہا ہے۔ اپوزیشن نے بجٹ پڑھا ہی نہیں ورنہ ان کے بیانات میں تضاد نہ ہوتا، پریس کانفرنس میں موجود رہنما تعلیم و صحت کے بجٹ پر مختلف اعدادو شمار پیش کرتے رہے جس سے ان کی اپنی سیاست کا پوسٹمارٹم ہوگیا ہے۔

ترجمان پنجاب

مزید :

صفحہ آخر -