اسٹاک ایکس چینج حملے کا مقدمہ نامعلوم دہشت گردوں کیخلاف درج

اسٹاک ایکس چینج حملے کا مقدمہ نامعلوم دہشت گردوں کیخلاف درج

  

کراچی(کرائم رپورٹر)پاکستان اسٹاک ایکس چینج حملے کا مقدمہ ایس ایچ او میٹھادر کی مدعیت میں سی ٹی ڈی سول لائن میں نامعلوم دہشت گردوں کے خلاف درج کیا گیا ہے،مقدمے میں دہشت گردی، قتل، اقدام قتل، پولیس مقابلے، ایکسپلوزیو ایکٹ اور سندھ آرمرز ایکٹ سمیت دیگر دفعات شامل کی گئی ہیں۔حملے میں چاروں حملہ آور مارے گئے تھے۔تفصیلات کے مطابق میٹھادر تھانے کی حدود آئی آئی چندریگر روڈ پر واقع پاکستان اسٹاک ایکسچینج میں پیر کی صبح 10 بجکر20 منٹ پر دہشت گردوں کے حملے کا مقدمہ الزام نمبر 79/2020 تھانہ سی ٹی ڈی (آپریشن)سول لائن میں ایس ایچ او میٹھا در انسپکٹر رضوان پٹیل کی مدعیت میں درج کیا گیاہے۔مقدمے میں 3/4/5ایکسپلوزیو ایکٹ، دہشت گردی ایکٹ 7ATA، 302، 324، 353، 427، 120-B، 109/34، 23(1)aسندھ آرمز ایکٹ2013 کے تحت درج کیاگیاہے۔مقدمے کی تفتیش سی ٹی ڈی کے انسپکٹر چوہدری عارف حسین کے سپرد کی گئی ہے۔مقدمے میں ملزمان سے ملنے والی سب مشین گنز کے نمبرز درج ہیں، مقدمہ میں کراچی اسٹاک ایکس چینج سے قبضے لیے گئے دو موبائل فونز کا بھی اندارج کیا گیا ہے۔ادھر بم ڈسپوزل اسکواڈ نے پاکستان اسٹاک ایکسچینج پر دہشت گرد حملے سے متعلق رپورٹ تیار کر لی ہے، جس میں کہا گیا ہے کہ دہشت گردوں سے برآمد دستی بموں کو انتہائی مہارت کے ساتھ ناکارہ بنا دیا گیا ہے۔رپورٹ میں بتایا گیا کہ دہشت گردوں سے 39 رائفل گرنیڈز، ایک آٹومیٹک لانچر ملا، برآمد شدہ 15 روسی ساختہ اور 10 امریکن میڈ دستی بم ناکارہ بنائے گئے ہیں۔رپورٹ کے مطابق دہشت گردوں نے پی ایس ایکس کے مرکزی دروازے پر جو بم دھماکا کیا تھا وہ روسی ساختہ تھا، دہشت گردوں کی جانب سے استعمال کیا گیا دوسرا دستی بم ناکارہ ہو گیا تھا، دہشت گردوں کے سامان سے پیٹرول کی بڑی بوتلیں بھی برآمد ہوئی ہیں۔

مزید :

صفحہ اول -