پی ٹی آئی کے منحرف ارکان اسمبلی کی الیکشن کمیشن کے فیصلےکیخلاف درخواستیں سماعت کیلئے مقرر

پی ٹی آئی کے منحرف ارکان اسمبلی کی الیکشن کمیشن کے فیصلےکیخلاف درخواستیں ...
پی ٹی آئی کے منحرف ارکان اسمبلی کی الیکشن کمیشن کے فیصلےکیخلاف درخواستیں سماعت کیلئے مقرر

  

اسلام آباد( ڈیلی پاکستان آن لائن) پاکستان تحریک انصاف کے  منحرف ارکان اسمبلی کی الیکشن کمیشن کے  فیصلےکیخلاف درخواستیں سپریم کورٹ میں سماعت کیلئےمقرر کر دی گئیں۔

نجی ٹی وی دنیا نیوز کے مطابق  چیف جسٹس عمر عطا بندیال  کی سربراہی میں 3 رکنی بنچ 5 جولائی کو درخواستوں پر سماعت کرےگا،  بنچ میں جسٹس محمدعلی مظہر،جسٹس امین الدین خان شامل ہیں۔

خیال رہے کہ   الیکشن کمیشن نےپنجاب سےپی ٹی آئی کےمنحرف ارکان کوڈی سیٹ کیاتھا،  منحرف ارکان نےفیصلےکیخلاف سپریم کورٹ سےرجوع کررکھاہے۔

خیال رہے کہ 20 مئی کو  پاکستان تحریک انصا ف کے منحرف ہونے والے  25 ارکان  پنجاب اسمبلی  کو الیکشن کمیشن نے  ڈی سیٹ کر دیا تھا ۔  پی ٹی آئی کے 25 منحرف ارکان پنجاب اسمبلی کا فیصلہ چیف الیکشن کمشنر سکندر سلطان راجہ نے سنایا، الیکشن کمیشن کے ارکان نے فیصلہ اتفاق رائے سے  کیا۔

الیکشن کمیشن نے اپنے فیصلے میں کہا کہ  پی ٹی آئی کے 25 منحرف ارکان نے مخالف امیدوار کو ووٹ کاسٹ کیا،پی ٹی آئی کے 25 منحرف ارکان کا مخالف امیدوار کو ووٹ کاسٹ کرنا ثابت ہو گیا ۔فیصلے کے بعد پی پی 7 راولپنڈی 2 سے راجہ صغیر احمد ،پی پی 83خوشاب سےملک غلام رسول ،پی پی90بھکرسے سعیداکبرخان نوانی ، پی پی97فیصل آبادسے محمد اجمل ،پی پی125جھنگ سے فیصل حیات جبوانہ ، پی پی127جھنگ سے مہر محمد اسلم ،پی پی140شیخوپورہ سے میاں خالد محمود ،پی پی158لاہور سے عبدالعلیم خان ،پی پی202ساہیوال سےملک نعمان لنگڑیال ،پی پی217 ملتان 7 سےمحمد سلمان نعیم ، پی پی224لودھراں سے زوار حسین وڑائچ ،پی پی237بہاولنگر سےفداحسین ، پی پی288 ڈی جی خان 2 سےمحسن عطاخان کھوسہ  و دیگر ڈی سیٹ ہو گئے تھے۔

واضح رہے کہ پنجاب اسمبلی میں وزیر اعلیٰ کے چناؤ کے موقع پر پاکستان تحریک انصاف کے  25 ارکان نے اپنے وزیر اعلیٰ کے نامزد امید وار کی بجائے حمزہ  شہباز کو ووٹ ڈالا  تھا  ۔  چیئرمین پاکستان تحریک انصاف عمران خان نے آرٹیکل 63 اے کے تحت ریفرنس سپیکر پنجاب اسمبلی کے پاس بھجوایا تھا۔

مزید :

اہم خبریں -قومی -