پنجاب کا وہ ضلع جہاں طلاق اور خلع کے کیسز میں ہوشربا اضافہ ہوگیا

پنجاب کا وہ ضلع جہاں طلاق اور خلع کے کیسز میں ہوشربا اضافہ ہوگیا
پنجاب کا وہ ضلع جہاں طلاق اور خلع کے کیسز میں ہوشربا اضافہ ہوگیا

  

راولپنڈی(مانیٹرنگ ڈیسک) رواں سال کے ابتدائی 6ماہ میں ضلع راولپنڈی میں طلاق اور خلع کے کیسز میں غیرمعمولی اضافہ دیکھنے میں آیا ہے۔ ایکسپریس ٹربیون کے مطابق جنوری سے جولائی 2022کے دوران ضلع کی فیملی کورٹس میں طلاق، خلع، جہیز، بچوں کی حوالگی اور بچوں کے اخراجات وغیرہ کے 5ہزار 216کیسز داخل کرائے گئے۔ اس دوران 457مردوں کی طرف سے اپنی بیویوں کے ساتھ صلح کے لیے بھی عدالت سے رجوع کیا گیا۔

رپورٹ کے مطابق اس عرصے میں ضلع راولپنڈی کی فیملی کورٹس نے طلاق اور خلع کی2ہزار 114ڈگریاں جاری کیں جبکہ 2ہزار 891کیسز میں مردوں کو بچوں کے ماہانہ اخراجات اپنی ناراض بیویوں کو ادا کرنے کا حکم دیا گیا۔عدالتوں کی طرف سے51ناراض بیویوں کو اپنے سسرال واپس جانے کا حکم بھی دیا۔ 

رپورٹ کے مطابق اس وقت ضلع راولپنڈی کی فیملی عدالتوں میں 9ہزار 602کیسز زیرالتوا ہیں۔ رواں سال گوجرخان، کلرسیداں، کہوٹہ، کوٹلی ستیاں، مری اور ٹیکسلا تحصیل کورٹس میں فیملی مقدمات کی شرح میں بہت اضافہ ہوا ہے۔وکلاءکی اکثریت کا کہنا ہے کہ سوشل میڈیا نے معاشرے کی اقدار و روایات کو تباہ کرکے رکھ دیا ہے اور لوگوں کی زندگیاں ابتر ہو کر رہ گئی ہیں۔ فیملی کیسز کی شرح میں اضافے کی سب سے بڑی وجہ یہی سوشل میڈیا ہے، جس پر بننے والے تعلقات شادی شدہ لوگوں کے گھر ٹوٹنے اور لڑکیوں کے گھروں سے بھاگ کر شادیاں کرنے کے واقعات میں اضافے کا سبب بن رہے ہیں۔

مزید :

علاقائی -پنجاب -راولپنڈی -