فیفا نے نسل پرستی کیخلاف اقدامات کی منظوری دیدی

فیفا نے نسل پرستی کیخلاف اقدامات کی منظوری دیدی
فیفا نے نسل پرستی کیخلاف اقدامات کی منظوری دیدی

  

مارش(مانیٹرنگ ڈیسک) فٹبال کی عالمی تنظیم فیفا نے اپنی سالانہ کانفرنس میں نسلی امتیاز کے حوالے سے ایک نئے قانون کی منظوری دے دی ہے جس کے تحت نسل پرستی کے خلاف سخت اقدامات تجویز کیے گئے ہیں۔ان اقدامات میں نسل پرستی کے سنگین جرائم میں ملوث کلبز کی تنزلی بھی شامل ہے۔فیفا نے جمعہ کو ماریشس میں اپنی کانگریس میں دو مراحل میں 99 فیصد اکثریت کے ساتھ نسل پرستی کے خلاف ایک قرارداد منظور کی جس کے تحت نئے قوانین کی رو سے پہلی بار یا معمولی نوعیت کی نسل پرستی میں ملوث کلبز کو پہلے صرف وارننگ یا جرمانہ کیا جائے گا، یا پھر یہ میچ بند دروازوں میں کھیلا جائے گا-ان اقدامات کے تحت سنگین یا مسلسل نسل پرستی میں ملوث کلبز کے پوائنٹس کاٹے جا سکتے ہیں، کلب کو ٹورنامنٹ سے خارج کیا جا سکتا ہے اور یہاں تک کہ مذکورہ کلب کی درجہ بندی میں بھی تنزلی بھی ممکن ہے۔پہلے اس ضابطہ اخلاق اور قانون کا اطلاق صرف انٹرنیشنل میچوں تک محدود تھا لیکن اس قرارداد کی منظوری کے بعد ان کا اطلاق مختلف ممالک میں فیفا سے منظور کردہ مقامی میچوں پر بھی ہو گا۔فیفا کے صدر سیپ بلاٹر نے کہاکہ نسل پرستی، جہالت، امتیازی سلوک، عدم برداشت اور چھوٹے ذہنیت والا تعصب فیفا اور سوسائٹی مل کر ختم کرے گی ۔

مزید : کھیل