ایران کا جوہری معائنہ کاروں کو جوہری تنصیبات تک رسائی دینے سے انکار

ایران کا جوہری معائنہ کاروں کو جوہری تنصیبات تک رسائی دینے سے انکار

  

تہران (اے پی پی) ایرانی مذاکراتی وفد کے معاون سربراہ عباس عراقچی نے کہا ہے کہ اقوام متحدہ کے معائنہ کاروں کو ایرانی سائنس دانوں اور فوجی مقامات تک رسائی کی اجازت عالمی طاقتوں کے ساتھ جاری جوہری مذاکرات کا حصہ نہیں۔ ذرائع ابلاغ کے مطابق ایران کے مذاکراتی وفد کے معاون سربراہ عباس عراقچی نے اپنے ایک بیان میں کہا ہے کہ بین الاقوامی معائنہ کاروں کو اْن کے ملک کی فوجی تنصیبات تک رسائی نہیں دی جائے گی۔انہوں نے کہا کہ اقوام متحدہ کے معائنہ کاروں کو ایرانی سائنس دانوں اور فوجی مقامات تک رسائی کی اجازت مذاکرات کا حصہ نہیں ہے۔واضح رہے کہ ایران کے فوجی مقامات کا معائنہ مغرب کا ایک کلیدی مطالبہ ہے۔ دوسری نجانب امریکی وزیر خارجہ جان کیری اور ان کے ایرانی ہم منصب جواد ظریف نے اپنے اپنے وفود کی موجودگی میں جنیوا کے ایک ہوٹل میں چھ گھنٹوں تک بات چیت کی۔ایران اور پانچ جمع ایک گروپ کے مذاکرات کار جس میں امریکہ، برطانیہ، چین، فرانس، روس اور جرمنی شامل ہیں حتمی سمجھوتے کی تفصیل پر کام کر رہے ہیں جس میں یہ کوشش کی جا رہی ہے کہ تعزیرات میں نرمی کے عوض ایران اپنے جوہری پروگرام کی سطح کم کرنے پر رضامند ہو جائے۔ گروپ کا کہنا ہے کہ معائنہ کاروں کو ایرانی مقامات اور سائنس دانوں تک رسائی لازم ہے تاکہ یہ طے کیا جاسکے کہ آیا ایران ایٹمی بم تشکیل دینے کی کوشش تو نہیں کر رہا۔

دوسری جانب ایران کا کہنا ہے کہ اس کا جوہری پروگرام پْرامن مقاصد کے لیے ہے، جِس سے طبی تحقیق اور بجلی پیدا کرنے میں مدد ملے گی۔

مزید :

عالمی منظر -