مقبوضہ کشمیر کے ضلع اسلام آباد میں پاکستانی پرچم لہرانے پرنوجوانوں کے گھروں پر چھاپے‘ 4 گرفتار,درجنوں روپوش

مقبوضہ کشمیر کے ضلع اسلام آباد میں پاکستانی پرچم لہرانے پرنوجوانوں کے گھروں ...

  

سرینگر(آن لائن) مقبوضہ کشمیر میں کشمیری نوجوانوں کی طرف سے ایک ریلی کے دوران پاکستانی پرچم لہرانے کے ایک روز بعد بھارتی پولیس نے ضلع اسلام آباد کے مختلف علاقوں میں متعدد نوجوانوں کے گھروں پر چھاپے مارے اور کم از کم4نوجوانوں کو گرفتار کرلیا جبکہ درجنوں نوجوان گرفتاری سے بچنے کیلئے روپوش ہوگئے ہیں۔ میڈیا رپورٹ کے مطابق بھارتی پولیس نے اسلام آباد قصبے اور ضلع کے دیگر علاقوں میں نوجوانوں کے گھروں پر چھاپے مار کر انہیں گرفتار کر لیا اور ان پر پاکستانی پرچم لہرانے اور پاکستان کے حق میں نعرے بازی کرنے کا الزام لگایا۔ علاقے کے لوگوں کا کہنا ہے کہ بھارتی پولیس روپوش نوجوانوں کے بدلے ان کے دیگر رشتے داروں کو گرفتار کررہی ہے ۔ اسلام آباد قصبے میں تھانہ صدرکے ایس ایچ او کا کہنا ہے کہ پاکستانی پرچم لہرانے میں ملوث نوجوانوں کی نشاندہی کرکے ان کے خلاف کیس درج کئے جائیں گے۔یاد رہے کہ جمعے کوسینئر حریت رہنما شبیر احمد شاہ کی ریلی میں اسلام آباد کے لالچوک میں پاکستانی پرچم لہرائے گئے تھے ۔

جبکہ ریلی کے اختتام پر بی جے پی کا جھنڈا نذر آتش کیاگیا تھا جس کے بعد بھارتی پولیس نے شبیر احمد شاہ ، مولانا محمد عبداللہ طاری اور مولوی بشیر احمدکو گرفتار کر کے ان کے خلاف مقدمہ درج کیاتھا تاہم شبیراحمد شاہ کو بعد میں رہا کیاگیاتھا۔اس سے قبل مسلم لیگ کے سربراہ مسرت عالم بٹ پر 15اپریل کو سید علی گیلانی کی استقبالیہ ریلی میں پاکستانی پرچم لہرانے کے الزام میں پبلک سیفٹی ایکٹ کے تحت نظر بند کیاگیا تھا جبکہ سید علی گیلانی کی ترال میں ریلی اور میرواعظ عمر فاروق کی سرینگر میں حال ہی میں ایک ریلی میں بھی نوجوانوں نے پاکستانی پرچم لہرائے تھے۔ دریں اثناء سید علی گیلانی کی سرپرستی میں فورم نے قصبہ سوپور اور اس کے گردونواح میں بھارتی فوج اورپولیس ٹاسک فورس کے ہاتھوں درجنوں نوجوانوں کی گرفتاری کی شدید مذمت کرتے ہوئے کہا ہے کہ بھارتی فورسز نوجوانوں کو محض شک کی بنیاد پرگرفتار کرکے شدید تشددکا نشانہ بناتی ہیں۔ فورم نے محمد وسیم بٹ، شیخ الطاف اور دوسرے نوجوانوں کی فوری رہائی کا مطالبہ کیاہے۔

مزید :

عالمی منظر -