بجلی کے بل نے بھارتی دکاندار کی والدہ کو ہسپتال پہنچادیا

بجلی کے بل نے بھارتی دکاندار کی والدہ کو ہسپتال پہنچادیا
بجلی کے بل نے بھارتی دکاندار کی والدہ کو ہسپتال پہنچادیا

  

نئی دہلی (مانیٹرنگ ڈیسک) بجلی کے زائد بل اور لوڈشیڈنگ کی کہانیاں پاکستان میں اب معمول کی باتیں بن گئی ہیں لیکن یہی مسئلہ جب ایک بھارتی دکاندار کیساتھ ہواتواس کی والدہ بجلی کا بل دیکھ کر بے ہوش ہوگئیں جس پر اُنہیں ہسپتال لے جاناپڑا۔

بھارتی میڈیا کے مطابق ریاست جھارکھنڈ کے دارالحکومت رانچی کے علاقے کادرو میں کرشنا پرساد نامی شخص کی دکان کابل 55 کروڑ 49 لاکھ 88 ہزارروپے آگیا جبکہ دکان میں دواے سی ، ایک ریفریجریٹر، 2 انرجی سیوراور 3 پنکھے ہیں۔ گزشتہ ماہ اسے 9 ہزار 736 روپے کا بل موصول ہوا تھا۔ بل میں درج اعداد و شمار کے مطابق کرشنا نے ایک ماہ میں 9 کروڑ 90 لاکھ یونٹ بجلی استعمال کی۔

بجلی کا بل دیکھ کر کرشنا کی والدہ کی حالت بگڑ گئی ۔ڈاکٹروں کا کہنا تھا کہ ذہنی صدمے کے باعث ان کا بلڈ پریشر بہت بڑھ گیا تھا جس سے انہیں دل کے دورے کا خطرہ تھا تاہم اب ان کی حالت بہتر ہے۔

 کرشنا پرساد کا کہنا ہے کہ یہ بل اس وقت بھیجا گیاہے جب دن میں کم از کم 7 گھنٹے بجلی نہیں ہوتی، اس بل کی وجہ سے ان کی والدہ کی طبیعت خراب ہوئی جس کی وجہ سے وہ متعلقہ حکام کے خلاف عدالت میں جائیں گے۔

دوسری جانب جھاڑ کھنڈ سٹیٹ الیکٹریسٹی بورڈ کا کہنا ہے کہ بھجوائے گئے بل کی وجہ کمپیوٹر سافٹ وئیر کی خرابی تھا،اب یہ دور کرلی گئی اور بل بھی درست کردیاجائے گا، اصل میں یہ بل 10 ہزار روپے تھا۔

مزید :

بین الاقوامی -