افغان طالبان کے منحرف دھڑے کی امن مذاکرات کیلئے مشروط آمادگی

افغان طالبان کے منحرف دھڑے کی امن مذاکرات کیلئے مشروط آمادگی
افغان طالبان کے منحرف دھڑے کی امن مذاکرات کیلئے مشروط آمادگی

  


کابل (ویب ڈیسک) افغان طالبان سے علیحدگی اختیار کرنیوالے دھڑے‘ ملارسول گروپ ‘ نے افغان حکومت کیساتھ مذاکرات پر مشروط آمادگی ظاہر کر دی۔ امریکی خبررساں ادارے کے مطابق اس طالبان دھڑے کے سینئر رہنما ملا عبدالمنان نیازی نے مشرقی افغانستان میں اپنے 200 کے قریب حامیوں کیساتھ اجلاس کیا اور بعد ازاں ایک بیان میں کہا کہ ہمارے دھڑے کا افغان حکومت پر سے اعتماد مکمل طور پر اٹھ چکا ہے، تاہم اب بھی ہمارا گروپ کابل کیساتھ مذاکرات پر آمادہ ہے، تاہم اس کیلئے کچھ لازمی شرائط ہو نگی، ان شرائط میں افغانستان میں شرعی قوانین کا نفاذ اور ملک سے تمام غیر ملکی فوجیوں کا انخلا شامل ہے۔ خیال رہے کہ ملاعبدالمنان نیازی منحرف دھڑے کے سربراہ ملا محمد رسول کا نائب ہے ، ملا رسول گروپ گزشتہ موسم گرما میں افغان طالبان سے علیحدہ ہوا جبکہ اس وقت طالبان نے ہلاک ہونیوالے اپنے بانی سربراہ ملا عمر کے جانشین کے طورپر ملا اختر منصور کو منتخب کر لیا تھا۔ دوسری جانب افغان طالبان کے مرکزی گروپ نے بھی اس رد عمل میں بیان جاری کرتے ہوئے کہا کہ ملا رسول کو کابل اور واشنگٹن کی پشت پناہی حاصل رہی ہے ۔ ترجمان طالبان ذبیح اللہ مجاہد نے ملارسول کے دھڑے کو طالبان کی شکل میں پائی جانیوالی حکومتی فوج قرار دیتے ہوئے مزید کہا کہ ہمارے لئے ملا رسول ایک مقامی پولیس اہلکار اور افغان خفیہ سروسز کی ایک کٹھ پتلی سے زیادہ نہیں ہے ۔

مزید : بین الاقوامی