پنجاب کی اراضی ریکارڈ سنٹرز پر بے ضابطگیوں کا انکشاف، رپورٹ مرتب، جلد کارروائی کا امکان

پنجاب کی اراضی ریکارڈ سنٹرز پر بے ضابطگیوں کا انکشاف، رپورٹ مرتب، جلد ...

لاہور(اپنے نمائند ے سے)ٹاؤٹ مافیا کا راج، مس مینجمنٹ،غیر حاضری،سٹاف کی دوران کام عدم دستیابی ،اختیارات کا ناجائز استعمال اور رشوت وصولی کی اطلاعات،ڈپٹی پی ڈی پنجاب کی ہدایات پر مینیجر آپریشن کے پنجاب کے اراضی ریکارڈ سنٹرز پر چھاپے، پنجاب کی 13تحصیلوں میں قائم کردہ اراضی سنٹرز میں پائی جانے والی سنگین خامیوں اورشکایات کے حوالے سے رپورٹ مرتب ،بدعنوان عناصر کو اراضی ریکارڈ سنٹرز سے فارغ کر دیں گے،رشوت اور بدعنوانی کی شکایات پر کوئی سمجھوتہ نہیں کیا جائے گا ،مینیجر آپریشن عثمان احمد کی گفتگو ۔تفصیلات کے مطابق پنجاب کی 143تحصیلوں میں قائم اراضی ریکارڈ سنٹرز میں ٹاؤٹ مافیا کا آزادانہ استعمال،مس مینجمنٹ،غیر حاضری،دوران کام سٹاف کی عدم دستیابی ،اختیارات کا ناجائز استعمال اور رشوت وصولی کی اطلاعات نے پراجیکٹ مینجمنٹ یونٹ انتظامیہ کی کارکردگی پرسوالیہ نشان لگا دیا ہے ،متعدد شکایات کی وصولی کے بعد ڈپٹی پی ڈی پنجاب مقبول احمد دھاولہ کی ہدایات پر مینیجر آپریشن پنجاب عثمان احمد نے تمام اراضی سنٹرز کی سرپرائز چیکنگ اور چھاپوں کا سلسلہ شروع کر دیا ہے ۔جس کے سلسلہ میں گزشتہ ہفتہ مینیجر آپریشن کیجانب سے وزیر آباد ،گجرات،کھاریاں،سرائے عالمگیر،دینہ،گوجر خان،روات(پنڈی)،فتح جنگ،اٹک،حضرو،حسن ابدال، مری اور چوہا سیدن شاہ میں سرپرائز چھاپے مارے گئے تو ان اراضی سنٹرز میں عوام الناس نے بھی سٹاف کے خلاف شکایات کے انبار لگا دیئے جن پر فوری ایکشن لے کر مینیجرآپریشن نے مذکورہ سنٹرزکے سٹاف کے خلاف رپورٹ مرتب کر لی ہے ۔ جس کی روشنی میں ملوث افراد کے خلاف قانونی کارروائی کا آغاز جلد کئے جانے کا امکان ہے۔ پنجاب کی 13تحصیلوں میں قائم کردہ اراضی سنٹرز میں پائی جانے والی سنگین خامیوں اور متعدد شکایات نے باقی سنٹرز کی کارکردگی کو مشکو ک کر دیا ہے جس کی وجہ سے باقی ماندہ سنٹرز پر بھی سرپرائز چھاپوں کا سلسلہ جاری رکھنے کا فیصلہ کر لیا گیا ہے۔مینیجر آپریشن پنجاب عثمان احمد نے کہا ہے کہ جو افسریا اراضی ریکارڈ سنٹرز کا ملازم بدعنوانی اور کام میں سستی کا مرتکب پایا گیا اس کے خلاف سخت کارروائی کی جائے گی۔اپنی ذمہ داری کو احسن طریقے سے نہ نبھانا بھی کرپشن ہے ۔آئندہ چند روز میں باقی تمام سنٹرز پر چھاپے مارے جائیں گے۔ بدعنوان عناصر کو اراضی ریکارڈ سنٹرز سے فارغ کر دیں گے۔رشوت اور بدعنوانی کی شکایات پر کوئی سمجھوتہ نہیں کیا جائے گا لہٰذاافسران و سٹاف اپنا قبلہ درست کر لے۔

مزید : صفحہ آخر