ایس ای سی پی نے رمضاربہ کے نئے قانون کا مسودہ عوامی مشاورت کیلئے جاری کر دیا

ایس ای سی پی نے رمضاربہ کے نئے قانون کا مسودہ عوامی مشاورت کیلئے جاری کر دیا

  

اسلام آباد (اے پی پی) سکیورٹیز اینڈ ایکسچینج کمیشن آف پاکستان نے مضاربہ کے نئے قانون کا مسودہ عوامی مشاورت کیلئے جاری کر دیا ہے، نیا مجوزہ قانون، مضاربہ کمپنیز اینڈ مضاربہ فلوٹیشن کے آرڈیننس مجریہ 1980ء کی جگہ لے گا۔ مضاربہ کا نیا مسودہ قانون ایس ای سی پی کی ویب سائٹ پر جاری کر دیا گیا ہے اور تمام سٹیک ہولڈرز اور عوام اس مسودہ قانون پر اپنی تجاویز و آراء 14جون تک ایس ای سی پی کو بھجوا سکتے ہیں۔ مضاربہ کا موجود قانون 37 برس پرانا ہے اور مضاربہ کے کاروبار کے جدید تقاضوں سے ہم آہنگ نہیں۔ اس بات کی اشد ضرورت ہے کہ مضاربہ آرڈیننس 1980 کی جگہ ایک نئے، جدید اور جامع قانون متعارف کرایا جائے۔ مضاربہ کے قانون کو جدید تقاضوں سے اہم آہنگ کرنے کیلئے مجوزہ قانون میں کئی ایک تبدیلیاں تجویز کی گئی ہیں اور نئے تصورات متعارف کرائے گئے ہیں۔ مضاربہ کے لفظ کا غلط استعمال روکنے کے لئے بھی نئے قانون میں جامع شق ڈالی گئی ہے جس کے مطابق کوئی بھی ادارہ یا شخض لفظ مضاربہ استعمال نہیں کرے گا اور نہ ہی لفظ مضاربہ اور مشارکہ کا استعمال کر کے عوام سے فنڈز اکٹھے کرے گا۔ اس شق کی خلاف ورزی ایک مجرمانہ فعل ہو گا جس کی سزا زیادہ سے زیادہ سات سال قید اور دس کروڑ روپے تک جرمانہ ہو سکے گا اور علاوہ ازیں کسی فرد کو پہنچنے والے نقصان کے ازالہ کے طور پر دس کروڑ روپے یا نقصان سے دو گنا تک کا ہرجانہ بھی شامل ہو گا۔ اس جرم پر نیب، وفاقی تحقیقاتی ایجنسی یا قانون نافذ کرنے والے دیگر ادارے کارروائی کر سکیں گے جبکہ ایس ای سی پی مضاربہ کے نام کے غیر قانونی استعمال پر کیس دیگر ایجنسیوں کو بھجوا سکے گی۔ نئے مجوزہ قانون میں مضاربہ کے ریگولیٹڈ شعبے کی ترقی و فروغ کے لئے بھی معتدد اقدامات تجویز کئے گئے ہیں جن میں نا ن لسٹڈ مضاربہ کا قیام، مضاربہ مینجمنٹ کمپنی کا کارکردگی کی بنیاد پر منافع میں حصہ داری، شریعہ گورننس کا میکنزم، مضاربہ کے سرٹیفیکیٹ ہولڈروں کو زیادہ اختیارات اور تحفظ، سرٹیفیکیٹ ہولڈرز کا سالانہ اجلاس عام اور دیگر تجاویز شامل ہیں۔ مجوزہ قانون میں مضاربہ کے اکاؤنٹ کی سرکلیشن کی مدت کو چھ ماہ سے کم کر کے چار ماہ کرنے، سرٹیفیکیٹ ہولڈرز کی جانب سے آڈیٹر کے تقرر اور سرٹیفیکیٹ ہولڈرز کی جانب سے مضاربہ مینجمنٹ کمپنی، کمپنی کے چیف ایگزیکٹوکی تبدیلی کے لئے درخواست دینے کا حق دینے کی تجویز بھی دی گئی ہے۔ مزید، نئے مسودہ قانون میں مضاربہ مینجمنٹ کمپنیوں کے چیف ایگزیکٹو، ڈائریکٹرز اور دیگر نمایاں افسران کے لئے اہلیت کا معیار بھی دیا گیا ہے ۔

اور مضاربہ مینجمنٹ کمپنی کے شراکت داروں پر مضاربہ سے قرض لینے یا اس کے اثاثہ جات کا بطور سکیورٹی استعمال پر پابندی جیسی شرائط شامل کی گئی ہیں۔ نئے قانون پر عمل درآمد کو یقینی بنانے کے لئے کمیشن کے انفورسمنٹ کے اختیارت بھی شامل کئے گئے ہیں جبکہ کمیشن کو مضاربہ مینجمنٹ کمپنی کے چیف ایگزیکٹو اور دیگر اہم افسران کی برخاستگی کے اختیارات تفویض کرنے کی تجویز بھی دی گئی ہے جبکہ کمیشن کے پاس کچھ خاص حالات میں مضاربہ کمپنی کو بند کرنے کی کارروائی شروع کرنے کا اختیار بھی ہو گا۔ نئے مسودہ قانون کے پانچ شیڈولز ہوں گے اور ایس ای سی پی کو ان میں میں ترمیم کا اختیار بھی ہو گا۔

مزید :

کامرس -