سول جج سے بدتمیزی ، وکلاء کی معذرت کے بعد ججوں نے کام شروع کر دیا

سول جج سے بدتمیزی ، وکلاء کی معذرت کے بعد ججوں نے کام شروع کر دیا

  

لاہور(نامہ نگار)سول جج سے بدتمیزی کے واقعہ کی لاہوربار کی جانب سے مذمت اور وکلاء کی معذرت کے بعد ججوں نے کام شروع کر دیاہے۔واضح رہے کہ ایک روز قبل 2وکلاء رانا فیصل اور عاطف عقیل کی جانب سے سول جج کے ساتھ مبینہ بدتمیزی اورعدالت سے 6 فائلیں اٹھا کرلے جانے پر لاہور کے تمام سول اور ایڈیشنل سیشن ججوں نے کام چھوڑ دیاتھا۔تفصیلات کے مطابق گزشتہ روزضلعی عدلیہ میں وکلاء کی سول جج سے بدتمیزی اور فائل چھیننے کے واقعہ کے بعد دوسرے روز بھی ججوں نے غیر اعلانیہ ہڑتال کئے رکھی، لاہور کی کچہریوں میں زیر سماعت مقدمات کو وکلاء کی ججوں سے بدتمیزی کرنے کی وجوہات کو بنیاد بنا کر ملتوی کر دیا گیا اور سیشن کورٹ میں نئے مقدمات کی دائری اور نقل برانچیں بھی بند رہیں، بار اور بنچ کے اختلافات ختم کرنے کے لئے لاہور بار ایسوسی ایشن کے صدر چودھری تنویر اختر کی سربراہی میں بار کی کابینہ نے ڈسٹرکٹ اینڈسیشن جج لاہور عابد حسین قریشی سے مذاکرات کئے، بار ایسوسی ایشن نے وکلاء کے سول جج وسیم احمد کے ساتھ ناگوار رویے کی بھر پور مذمت کی، وکلاء رانا فیصل اور عاطف عقیل نے فاضل سول جج وسیم احمد سے معذرت کی، سیشن جج نے وکلاء کے معذرت کرنے پر صلح کروا دی،اس موقع پر صدر لاہوربار سمیت دیگرعہدیدارن کا کہنا تھا کہ بار ہمیشہ غلط کو غلط اور درست کو درست کہے گی، بار اور بنچ کو مل کر چلنا ہو گا،بعدازاں ضلعی عدلیہ میں بار اور بنچ کے درمیان مذاکرات کی کامیابی کے بعد صلح ہونے پر تمام کچہریوں اور سیشن کورٹ کی تمام برانچیں کھول دی گئیں اور ججوں کی جانب سے بھی معمول کے مطابق عدالتوں میں کام شروع کر دیاگیاہے۔

مزید :

صفحہ آخر -