گرفتاری کے خوف سے عباسیہ کینال میں کودنے والے نوجوان کی لاش برآمد

گرفتاری کے خوف سے عباسیہ کینال میں کودنے والے نوجوان کی لاش برآمد

  

اوچ شریف(نمائندہ پاکستان )پولیس کے تعاقب سے نوجوان نے عباسیہ کینال میں چھلانگ لگا دی ڈوب کر جاں بحق ،نعش برآمد،ورثاء کا لاش قومی شاہراہ پر رکھ کر احتجاج ،اوچ شریف میں پولیس اہلکاروں کے تعاقب کے دوران نوجوان نے گرفتاری کے خوف سے عباسیہ کینال میں چھلانگ (بقیہ نمبر17صفحہ12پر )

لگانے سے ڈوب گیا لاش36گھنٹوں بعد برآمد ہوئی ۔بتایا جاتا ہے نوجوان محمد عدنان بختیاری پل للو والی پر اڈا منیجر تھا جو بس اڈا پر بیٹھا تھا کہ سوزوکی مہران پر چار افراد جو دو پولیس وردی اور دو سادہ لباس میں پکڑنے کی کوشش پر بھاگ کر قریبی عباسیہ کینال میں کود گیا دوسرے کنارے نکلنے کی کوشش پر پولیس اہلکار بھی پہنچ گئے نوجوان نے دوبارہ چھلانگ لگا دی تھوڑی دیر تک نہ نکلنے پر کار سوار بھاگ گئے اطلاع پر ورثاء پہنچ گئے مقامی غوطہ خوروں نے بچانے کے لیے بھی کود گئے ریسکیو 1122ٹیمیں پہنچ گئیں تلاش کے36گھنٹوں بعد پل جاگیر والی کے مقام پر لاش برآمد ہوئی ورثاء لاش لے کر قومی شاہراہ پر رکھ کر احتجاجا سڑک بلاک کر دی مقامی پولیس پہنچ کر مذاکرات کیے بھائی محمد ایاز بختیاری کی مدعیت میں دو نامزد ملزمان اعجاز احمد للو اور سجاد حسین للو کے خلاف مقدمہ درج کر لیا لاش پوسٹمارٹم کے لیے ہسپتال منتقل کر دی ،مقامی پولیس کے مطابق نوجوان عدنان کے خلاف تھانہ شہر سلطان میں خاتون اغواء کا مقدمہ درج تھا جبکہ شہر سلطان پولیس چھاپہ مارنے کی تصدیق سے انکار کر دیامدعی ایاز احمد بختیاری نے بتایا کہ ڈوبنے کے بعد میرے بھائی عدنان پر تھانہ شہر سلطان میں جھوٹا مقدمہ بنایا گیا تھا ہمیں انصاف نہ ملا احتجاج جاری رکھیں گے ۔

مزید :

ملتان صفحہ آخر -